The news is by your side.

ماڑی پور : بجلی مانگنے والے مظاہرین پر پولیس ٹوٹ پڑی، لاٹھی چارج شیلنگ

کراچی : شہر قائد میں بجلی کی غیراعلانیہ اور طویل لوڈشیڈنگ سے شہری عذاب میں مبتلا ہوگئے، لیاقت آباد، پی آئی بی، 3ہٹی، گارڈن اور متعدد علاقوں میں شدید احتجاج کیا گیا جبکہ ماڑی پور روڈ کو ٹریفک کیلئے بند کردیا گیا۔

روشنیوں کے شہر کراچی میں اندھیرے کا راج رہا، شدید گرمی میں 16 گھنٹے کی طویل بندش نے عوام کا میٹر ہی گھما دیا۔

ماڑی پور روڈ پر بجلی کی لوڈشیڈنگ کےخلاف ہونے والے احتجاجی مظاہرین پر پولیس ٹوٹ پڑی، لاٹھیوں کے وار اور آنسو گیس کی شیلنگ سے کئی افراد زخمی ہوگئے۔

احتجاجی مظاہرین سے پولیس نے مذاکرات کرنے کی کوشش کی لیکن کامیاب نہ ہوسکے، پولیس کی جانب سے مظاہرین پر لاٹھی چارج بھی کیا گیا۔

بعد ازاں ذمہ دار افسران سے بات چیت کے بعد مظاہرہ ختم کرنے کا اعلان کیا گیا اور لوگ منتشر ہونا شروع ہوگئے لیکن بجلی کی لوڈ شیڈنگ کے خلاف مظاہرین نے ماڑی پور روڈ پر پھر احتجاج شروع کردیا، مظاہرین کو منتشر کرنے کے لیے پولیس کا لاٹھی چارج اور شیلنگ کی۔

مذاکرات کے بعد ایک گروپ نے احتجاج ختم کرنے پر رضا مندی کا اظہار کیا تھا، گزشتہ رات سے مظاہرین کا ایک گروپ احتجاج جاری رکھنے پر اصرار کرتا رہا۔

ماڑی پور روڈ پر احتجاج کے مظاہرین کے پتھراؤسے ایک اور پولیس اہلکار زخمی ہوگیا، پتھر لگنے سے اہلکار کے سر اور پاؤں میں چوٹ لگی، جسے طبی امداد کیلئے اسپتال منتقل کیا گیا۔

بعد ازاں پولیس نے آنسو گیس اور لاٹھی چارج کرکے مظاہرین کو منتشر کردیا اس دوران پولیس نے 9مظاہرین کو حراست میں لے لیا ہے، احتجاج ختم ہونے کے بعد ماڑی پور روڈ ٹریفک کیلئےکھول دیا گیا۔

مظاہرے کی وجہ سے گلبائی، شیر شاہ، ٹاور، ہاکس بے، لیاری ایکسپریس وے اور ڈاکس کی شاہراہوں پر ٹریفک کا نظام معطل ہوگیا جبکہ اطراف کی شاہراہوں پر گاڑیاں کافی دیر سے کھڑی ہیں۔

قبل ازیں مظاہرین کا کہنا تھا جب تک کے الیکٹرک بجلی کی لوڈشیڈنگ کا مسئلہ حل نہیں کرے گا تب تک احتجاج ختم نہیں کریں گے، احتجاج میں خواتین بھی بڑی تعداد میں سڑکوں پر موجود ہیں جبکہ لیڈی پولیس اہلکار کو بھی طلب کرلیا گیا۔

صورتحال کشیدہ ہونے کے باعث ماڑی پور روڈ پرٹریفک کی آمدورفت معطل ہوگئی تھی ، مظاہرین کے پتھراؤ کی وجہ سے ایک پولیس اہلکار زخمی بھی ہوا۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ پولیس کی جانب سےایک درجن سے زائد شیل فائر کیے گئے، مظاہرین کی جانب سے ٹریفک بند کرنے کی کوشش بھی کی گئی، ٹریفک بند کرانے کی کوشش پر پولیس کی جانب سے ہوائی فائرنگ کی گئی۔

ماڑی پور روڈ پر22 گھنٹے سے بجلی کی عدم فراہمی کے خلاف علاقہ مکینوں کا احتجاج پولیس تشدد کے بعد بھی جاری رہا، احتجاج کے22گھنٹے کے بعد ضلعی انتظامیہ کو ہوش آیا اور مذاکرات کے لیے ٹیم پہنچ گئی۔

اس موقع پر پولیس افسران بھی موجود ہیں، ضلعی حکام اہل علاقہ سے ان کے تحفظات سن رہے ہیں، مظاہرین کا مطالبہ ہے کہ بجلی کی آنکھ مچولی بند اور زیرحراست افراد کو رہا کیا جائے۔

پولیس اہلکار بجلی کے ستائے لوگوں پر تشدد نہ کریں، فواد چوہدری

اس حوالے سے سابق وفاقی وزیر اور پی ٹی آئی رہنما فواد چوہدری نے ٹوئٹر پر جاری ایک بیان میں کراچی پولیس سے اپیل کی ہے کہ کراچی پولیس سے کہنا چاہتا ہوں لوڈشیڈنگ مظاہرین پر تشدد نہ کریں۔

انہوں نے کہا کہ ان کا احتجاج بالکل جائز ہے یہ آپ کے اپنے لوگ ہیں آپ بھی اسی عذاب سے گزر رہے ہیں،

فوادچوہدری کا کہنا ہے کہ آصف علی زرداری اور مرادعلی شاہ اور ان کے حواری مظاہرین کی اس تکلیف کا اندازہ نہیں کرسکتے مگرآپ ان میں سے ہیں جو قانون کے خلاف احکامات نہ مانیں۔

Comments

یہ بھی پڑھیں