آسمان سے جلتے پتھروں کی بارش آج ہوگی -
The news is by your side.

Advertisement

آسمان سے جلتے پتھروں کی بارش آج ہوگی

آسمان سے مینہ برستے تو ہم سب آئے روز دیکھتے رہتے ہیں مگر آسمان سے جلتے پتھروں کی بارش کبھی کبھار ہی دیکھنے کو ملتی ہے۔ جو صدیوں سے انسان کے تجسس کو بھڑکائے ہوئے ہے اور قدیم تہذیبوں میں اس حوالے سے طرح طرح کی قیاس آرائیاں کی جاتی رہی ہیں مگر موجودہ دور میں سائنسی علوم اور ٹیکنالوجی میں روز افزوں پیش رفت کی بدولت یہ گتھی انسان نے سلجھا لی ہے، آج کی رات وہ علاقے جہاں مصںوعی روشنیاں کم اور مطلع صاف رہے گا وہاں آسمان سے گرتے ان پتھروں کا مشاہدہ کیا جاسکے گا۔

یہ پتھر دراصل فلکیاتی چٹانیں ( راکس) ہیں جو پوری کائنات اور ہمارے نظام ِ شمسی میں آوارہ گردی کر رہے ہیں ۔ جنھیں’می ٹیور‘ کا نام دیا گیا ہے۔ یہ پتھر اِدھر اُدھر بھٹکتے ہوئے جب سیارۂ زمین کی فضا میں داخل ہوتے ہیں تو ہوا کی رگڑ ان کا اندرونی درجۂ حرارت بڑھا دیتی ہے،جس کے باعث یہ بھڑک اٹھتے ہیں اور زمین سے دیکھنے پر یہ روشن پتھروں کی بارش معلوم ہوتی ہے جسے ’می ٹیور شاور ‘ کہا جاتا ہے ۔ عموما ََ می ٹیور شاورز کا مشاہدہ اس وقت کیا جاتا ہے جب کوئی دم دار ستارہ زمین کے پاس سے گزرتا ہے ۔ چونکہ دم دار ستارے بھی سورج ہی کے گرد محو ِ گردش ہیں ۔لہذاٰ انکی دم سے خارج ہونے والی ’ڈسٹ ‘ یا چھوٹے چھوٹے چٹانی پتھر دھار کی صورت میں پیچھے رہ جاتے ہیں جنھیں ’شوٹنگ سٹار ‘یا ’فالنگ سٹار ‘ بھی کہا جاتا ہے ۔

یہ دراصل خلا میں ہر جانب بکھری ہوئی چٹانیں یا کنکریاں ہیں جو سائز میں نسبتا ََ بڑی ہو تی ہیں اور لاکھوں میل فی گھنٹہ کی رفتار سے زمین سے 70 سے 100 کلومیٹر کی بلندی پر گرتے نظر آتے ہیں ، لیکن ان میں سے کوئی شاذو نادر ہی زمین پر آگرتا ہے کیونکہ ہوا سے مسلسل رگڑ کے باعث زمینی ماحول میں یہ جل کر راکھ ہوجاتے ہیں ۔ اگرچہ ایک شاور میں یہ پتھر ہر جانب سے گرتے ہوئے نظر آتے ہیں لیکن اگر ان کے راستے کی خط کشی کی جائے تو معلوم ہوگا کہ سارے پتھر خلا کے ایک مخصوص علاقے یا مقام سے آرہے ہوتے ہیں ۔لہذا ٰ ہر می ٹیورشاور کا نام ’کانسٹی لیشن‘ یا برج ( ستاروں کا جھرمٹ ) کے نام کی مناسبت سے رکھا جاتا ہے ۔

سنہ 2018 میں نظر آنے والے چند اہم می ٹیور شاورز مندرجہ ذیل ہیں ۔

پرسیڈ می ٹیورشاور: دنیا بھر سے فلکیات کے شائقین نے 13 اگست 2018 کی رات کو شہابیوں کے گرنے کی جس بارش کا مشا ہدہ کیا تھا اسے پر سیڈ می ٹیور شاور کہا جاتا ہے۔ جو 20 اگست تک ہر رات دیکھا گیا تھا مگر اس میں 13 اگست کی رات شدت تھی جس میں پتھروں کے گرنے کی تعداد 80 فی گھنٹہ تھی۔ اس شاور کا باعث بننے والے دم دار ستارے کا نام سوفٹ ٹرٹل ہے جس کا سورج کے گرد ایک چکر133 سال میں مکمل ہوتا ہے ۔ چونکہ 13 اگست کی رات چاند کی دو تاریخ تھی لہذا ٰ چاندنی بالکل نہ ہونے کے باعث اسے 30 سے 40 ڈگری کے زاویئے پر بہت واضح دیکھا گیا تھا۔ اس می ٹیور شاور میں گرنے والے پتھر ایک دوسرے سے اتنے کم فاصلے پر تھے کہ گرتے ہوئے کسی دھار یا روشن لکیرکی طرح معلوم پڑتے تھے۔ یہ بارش کو پرسیڈ شاور کا نام اس لیے دیا گیا ہے کیونکہ یہ پرشس کانسٹی لیشن کی جانب سے ہوتی ہے اور جس مقام سے یہ گرتے ہوئے دکھائی دیتے ہیں اسے فلکیات میں ‘ ریڈینٹ ‘ کہا جاتا ہے۔ اس شاور کو سب سے پہلے 1865 میں مشاہدہ کیا گیا تھا جس میں مکمل شدت سے پہلے ایک دفعہ پتھروں کے گرنے میں ہلکی شدت آتی ہے اور پھر کچھ وقفے کے بعد وہ زیادہ تعداد میں گرنے لگتے ہیں۔ پرسیڈ می ٹیور کا مشاہدہ 17 جولائی 2018 کی رات کو بھی کیا گیا تھا۔

اورینائڈ می ٹیور شاور: آسمانی پتھروں کی یہ بارش ہیلی کی دم دار ستارے کے زمین کے قریب سے گزرنے کے باعث دکھائی دیتی ہے۔ چونکہ یہ بارش اورین کانسٹی لیشن کی جانب سے ہوتی ہے اس لیئے اسے اورینائڈ می ٹیور شاور کہا جاتا ہے۔ اکتوبر 2018 میں 16 سے 30 اکتوبر کی راتوں میں اورینائڈ می ٹیور شاور ہر رات دیکھا گیا ۔ جس میں شدت 21 اکتوبر کی رات میں تھی اور اس رات فی گھنٹہ 25 شہابیئے گرتے ہوئے دیکھے گئے۔ جو آسمان پر 30 سے 40 ڈگری کے فاصلے پر واضح دکھائی دیئے۔ مگر 21 اکتوبر کو چاند کی 12 تاریخ ہونے اور بھرپور روشنی ہونے کے باعث آسمانی پتھروں کی یہ بارش اتنی واضح نہیں تھی۔

ٹورڈ می ٹیور شاور: فلکیات کے شائقین نے 5 نومبر 2018 کی رات کو آسمان سے پتھروں کی جس بارش کا مشاہدہ کیا اسے ٹورڈ می ٹیور شاور کہا جاتا ہےجو ٹورس کانسٹی لیشن کی جانب سے ہو تی ہے۔ اور اس کے باعث گرتے ہوئے می ٹیور کو 30 نومبر تک دیکھا جاسکے گا ۔ جو 2 پی اینکل دم دار ستارے کے زمین کے قریب سے گزرنے کے باعث ہوگی۔ 5 نومبر کی رات گرنے والے شہابیوں کی رفتار فی گھنٹہ دس تھی اور چونکہ اس رات چاند کی 27 تاریخ تھی تو چاند کی روشنی نہ ہو نے کے باعث اس بارش کو 14 ڈگری شمال یا اس سے دور 30 سے 40 ڈگری کے زاویوں پر بہت واضح دیکھا گیا تھا۔

لیو نائڈ می ٹیورشاور: شوٹنگ یا فالنگ سٹارز کی بارش کبھی بھی محض ایک رات تک محدود نہیں ہوتی بلکہ عموما ََ یہ ہفتوں تک گرتے نظر آتے رہتے ہیں ہر برس 17 اور 18 نومبر کی درمیانی شب لیو کانسٹی لیشن کی جانب سے لیونائڈ می ٹیور شاور کا مشاہدہ کیا جاتا ہے ۔کیونکہ ان راتوں میں ہماری زمین دم دار ستارے ٹیمپل ٹر ٹل کے بیضوی مدار میں سے ہوتی ہوئی گزرتی ہے ۔ دم دار ستارہ ٹیمپل ٹر ٹل 1865میں دریافت ہوا تھا اور اس کا سورج کے گرد ایک چکر تینتیس سال میں مکمل ہوتا ہے سو لیونائڈ شاور اس حوالے سے منفرد ہے کہ فلکیات کے شائقین اتنے ہی برس بعد دوبارہ اس نظارے سے لطف اندوز ہو سکیں گے۔ چونکہ یہ بارش لیو کانسٹی لیشن کی جانب سے ہوتی ہے اس لیئے اسے لیونائڈ می ٹیور شاور کا نام دیا گیا ہے۔ 2018 میں انہی راتوں میں لیونائڈ می ٹیور شاورچاند کی بھرپور روشنی ہونے کے باعث زیادہ واضح نہیں دیکھا جا سکا۔ ۔ اس رات فی گھنٹہ دس سے پندرہ می ٹیور گرتے ہوئے دکھائی دیئے ۔ اگرچہ پتھروں کے گرنے میں 17 نومبر کی رات شدت تھی مگر 18 نومبر کی رات انھیں زیادہ واضح نہیں دیکھا جاسکا۔

جیمی نائڈ می ٹیور شاور: سنہ 2018 کی آخری می ٹیور شاور سے فلکیات کے شیدائی 14-13 دسمبر کی رات لطف اندوز ہو سکتے ہیں جسے جمینی کانسٹی لیشن کی مناسبت سے جیمی نائڈ شاور کا نام دیا گیا ہے۔ اسے علی الصبح تین سے چار بجے کے درمیان بہت واضح دیکھا جا سکے گا ۔ اس می ٹیور شاور کی سال کی بہترین بارش کہا جاتا ہے کیونکہ یہ نا صرف بہت واضح ہوتا ہے بلکہ پتھروں کی گرنے کی رفتار بھی زیادہ اور بہت تیز ہوتی ہے۔2018 میں ان کے گرنے کی رفتار مزید تیز ہوگی اور فی گھنٹہ 100 شہابیے گرنے کی توقع ہے۔ جن کو دیکھنے کا بہترین وقت آدھی رات ہے۔ دستیاب ریکارڈ کے مطابق جیمی نائڈ می ٹیور شاور قدیم زمانے سے مشاہدے کیے جارہے ہیں اور سب سے پہلے 1833 میں اسے دیکھ کر باقاعدہ ریکارڈ بھی جمع کیا گیا ۔ اور یہ مشاہدہ کیا گیا کہ وقت کے ساتھ ساتھ اس میں پتھروں کے گرنے کی رفتار بڑھتی جارہی ہے کیونکہ مشتری کی گریویٹی ان چھوٹے چھوٹے اجسام کے منبع ایسٹی رائڈ 3200 فائی تھون کو کئی صدیوں سے آگے زمین کی طرف دکھیلتی رہی ہے۔ یہ ایسٹی رائڈ تقریبا 1 سال 4 ماہ میں سورج کے گرد اپنا چکر مکمل کرتا ہے۔

لہذاٰ اگر آپ فلکیات میں دلچسپی رکھتے ہیں نومبر اور دسمبر کی راتوں میں آسمانی پتھروں اور چٹانوں کی بارش دیکھنے کے خواہش مند ہیں تو آپ کو اس کے لیے آبادی اور روشن علاقوں سے دور ایسے مقامات کا رخ کرنا ہوگا جہاں مصنوعی روشنی بالکل نہ ہو اور آپ با آسانی متعلقہ کانسٹی لیشن کی طرف رخ کر سکیں ۔می ٹیور شاوزر کا سادہ آنکھ سے بھی با آسانی مشاہدہ کیا جا سکتا ہے اور اس کے لیے قطعا دور بین یا مخصوص فلکیاتی گلاسز کی ضرورت نہیں ہوتی ۔ پاکستان میں ابھی بھی دو بار ٹیور شاورز کا با آسانی مشاہدہ کیا جاسکے گا۔ سو ابھی سے اپنے کیلنڈرز کو مارک کرلیں ۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں