The news is by your side.

Advertisement

کراچی سے لاپتہ ہونے والی دعا زہرہ نے لاہور کے رہائشی سے نکاح کرلیا، پولیس

کراچی : الفلاح ٹاؤن سے لاپتہ ہونے والی دعا زہرہ نے لاہور کے رہائشی سے نکاح کرلیا، کراچی پولیس حکام کو دعا زہرہ سے متعلق آگاہ کردیا گیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق کراچی الفلاح سے 10 روز قبل لاپتہ ہونے والی دعا زہرہ کا پتہ چل گیا ، اس حوالے سے حکام نے بتایا کہ دعا زہرہ کو خصوصی ٹیم کی جانب سے ٹریس کیا گیا ہے۔

پولیس کا کہنا تھا کہ دعا زہرہ کراچی سے دوسرے صوبے میں پہنچ چکی تھی تاہم کراچی پولیس حکام کو دعازہرہ سے متعلق آگاہ کردیا گیا ہے اوردوسرے صوبے کی پولیس کراچی پولیس سے رابطے میں ہے۔


حکام نے بتایا کہ دعا زہرہ کے نکاح کی کاپی کراچی پولیس کو مل گئی ، جس کے مطابق دعائے زہرہ نے لاہور کے رہائشی ظہیر احمد نامی نوجوان سے نکاح کرلیا ہے۔

ڈی آئی جی آپریشنزلاہور ڈاکٹر عابد خان کی جانب سے بیان میں کہا گیا ہے کہ کراچی پولیس کی جانب سےلڑکی کا نکاح نامہ فراہم کیاگیا، پولیس نکاح نامے پر ایڈریس سے لڑکی کو تلاش کر رہی ہے۔

ڈاکٹر عابد خان کا کہنا تھا کہ دعا زہرہ کی بازیابی کےبعدہی اصل حقائق سامنےآئیں گے، پولیس کراچی پولیس سے مسلسل رابطے میں ہے، ٹیمیں تشکیل دیدیں ،لڑکی کوجلد تلاش کرلیں گے۔

پولیس ذرائع کے مطابق حوالگی سے قبل دعا زہرہ کا ویڈیو بیان بھی ریکارڈ کیا جائے گا، جسے اس کے والدین اور کراچی پولیس حکام سے شئیر کیا جائے گا۔

کراچی پولیس کا کہنا ہے کہ دعا زہرہ کی تحویل لینے کے بعد ہی میڈیا کو مکمل صورتحال سے آگاہی فراہم کی جاسکے گی۔

گذشتہ روز پولیس نے معاملے کو حساس قرار دیتے ہوئے کہا تھا کہ معاملہ زیادہ اٹھانے سے تفتیش پر اثر پڑتا ہے۔

حکام کا کہنا تھا کہ دعا زہرہ کی بازیابی کیلئے جدید ٹیکنالوجی کا استعمال کررہے ہیں ، ہر زاویے سےتفتیش کررہے ہیں، کوئی مسنگ لنک ہےتو وہ بھی تلاش کررہےہیں۔

پولیس نے بتایا تھا کہ بچی کو زبردستی لے جانے کو نظر انداز نہیں کرسکتے، ہر ممکن کوشش ہے کہ دعا جلد بازیاب ہو۔

یاد رہے پولیس نے اغوا ہونے والی دعا زہرہ سے منسوب ویڈیو کی غلطی تسلیم کرلی تھی ، جس کے بعد الفلاح تھانے کے ایس ایچ او کو معطل کردیا گیاتھا۔

واضح رہے کراچی کے علاقے الفلاح گولڈن ٹاؤن سے چودہ سال کی لڑکی لاپتہ ہوگئی تھی ، اہلخانہ نے دعویٰ کیا تھا کہ ساتویں کلاس کی دعا نامی طالبہ کو اغوا کیا گیا۔

پولیس کا کہنا تھا گھر سے کچرا پھینکنے نکلی تھی پھرواپس نہیں آئی تاہم مقدمہ درج کرلیا گیا تھا۔

Comments

یہ بھی پڑھیں