spot_img

تازہ ترین

کراچی میں موسلا دھار بارش کا کوئی امکان نہیں، چیف میٹرولوجسٹ

چیف میٹرولوجسٹ سردار سرفراز نے کہا ہے کہ کراچی...

ایاز صادق قومی اسمبلی کے اسپیکر منتخب

مسلم لیگ ن کے سردار ایاز صدیق قومی اسمبلی...

کمالیہ: بارش میں گھر کی چھت گر گئی، ماں باپ اور بیٹا جاں بحق

کمالیہ کے علاقے فاضل دیوان میں مسلسل اور تیز...

حکومت نے پیٹرول کی قیمت میں اضافہ کردیا

نگراں حکومت نے پیٹرول کی قیمت میں 4 روپے...

موبائل اسکرین پروٹیکٹر کیسا ہونا چاہیے؟

ہر شخص یہی چاہتا ہے کہ اس کا اسمارٹ فون صحیح سالم رہے جس کیلئے وہ ہر اقدام کرتا ہے تاکہ اس کا فون کسی بھی نقصان سے محفوظ رہے۔

مہنگے فون کے ساتھ اس کی اسکرین کی حفاظت کے لیے کسی میکینزم کا خیال اسکرین پروٹیکٹرز کی ایجاد کا سبب بنا۔

جیسا کہ ہر چیز اپنے وقت پر یا یوں کہیں کے ایک خاص پریشر یا کسی خاص زاویے سے لگانے پر ٹوٹ جاتی ہے مگر احتیاط سے فون کو ایسے اینگل اور پریشر کا سامنا کرنے سے بچایا جا سکتا ہے۔

بین الاقوامی مارکیٹ میں دستیاب سکرین پروٹیکٹرز پی ای ٹی (پولیتھیلین ٹیریفتھلیٹ/پولیسٹر، ایک قسم کا پلاسٹک جو پانی کی بوتلیں اور کھانے کے برتن وغیرہ بنانے کے لیے استعمال ہوتا ہے)۔

Protector

ٹی پی یو (تھرمو پلاسٹک پولی تھین، ایک بہت ہی لچکدار پلاسٹک)، ٹمپرڈ گلاس (کیمیکل والا گلاس) اسے بنانے کے لیے تھرمل ٹریٹمنٹ سے عام شیشے سے زیادہ مضبوط) اور نینو لیکوئیڈ (مائع شکل میں سلیکون ڈائی آکسائیڈ جو آپ کے فون کی اسکرین کی حفاظت کرتا ہے) کے ساتھ بنایا گیا ہے۔

یہ بہترین ٹمپرڈ گلاس اسکرین پروٹیکٹر مانے جاتے ہیں اور اچھی بات یہ ہے کہ یہ مقامی مارکیٹ میں دستیاب ہیں۔

ابتدائی طور پر اسکرین پروٹیکٹر مربع شکل میں بنائے گئے تھے (جسے ٹوڈی کہا جاتا ہے) لیکن اسکرین کے جس سائیڈ سے ہم موبائل کو چھوتے ہیں۔

اس کا کنارہ نوک دار ہوتا ہے، جس سے چہرے اور کانوں کو چوٹ لگتی تھی، اس تکنیکی خامی کو دور کرنے کے لیے کناروں کو گول کیا گیا جس نے 2.5ڈی کو جنم دیا۔

 phone

بعد میں جب سام سنگ کے نوٹ سیریز کے فونز کی طرح فون کی اسکرینوں کے کنارے مڑے ہوئے آنے لگے تو اسکرین پروٹیکٹرز بھی کناروں کو ڈھانپنے کے لیے اس کے مطابق جھکے ہوئے تھے، جس سے تھری ڈی پروٹیکٹرز کو بنایا گیا۔

اگرچہ وہ اطراف کے گول کناروں کو ڈھانپنے میں کافی کارآمد ہیں، لیکن وہ فون کے اوپر اور نیچے کے کناروں کو ٹھیک طرح سے نہیں ڈھانپتے اور ایک چھوٹا سا خلا چھوڑ دیتے ہیں اور کنارے کے ٹوٹنے کے امکانات ہوتے ہیں۔

زیادہ تھری ڈی اسکرین پروٹیکٹر کے ساتھ اکثر موبائل ٹچ کی حساسیت کے متاثر ہونے کی شکایات ہوتی ہیں۔

تھری ڈی کے بعد 5ڈی اسکرین پروٹیکٹرز متعارف کرائے گئے، جس میں اسکرین پروٹیکٹرز کے کناروں کو اسکرین کے کناروں کی گولائی کے ساتھ ڈیزائن کیا گیا ہے جس سے فون کی اسکرین کو بہتر کوریج ملتی ہے۔ جس سے ٹوٹنے کے امکانات کافی حد تک کم ہو جاتے ہیں۔

Smartphone

اس کے ساتھ ٹچ ایسے ہی ہے جیسے پروٹیکٹر کے بغیر یعنی فائیو ڈی میں تھری ڈی پروٹیکٹر کے ساتھ متاثرہ ٹچ حساسیت کی شکایت ختم کردی گئی ہے۔

اگر آپ واقعی اپنے فون کی حفاظت کرنا چاہتے ہیں تو اسکرین پروٹیکٹر کے ساتھ ایک اچھا موبائل کیس خریدیں جو کناروں اور اسکرین کو مزید محفوظ رکھتا ہو۔

Comments

- Advertisement -