The news is by your side.

Advertisement

ماڈل کورٹس کی تیز ترین سماعت: ایک دن میں 85 مقدمات نمٹا دیئے، دو مجرمان کو پھانسی

چیف جسٹس آصف سعید کھوسہ نے57نئے ماڈل کورٹس کی منظوری دے دی۔ 24 جون سے کام کا آغاز کریں گی

اسلام آباد : ملک بھر میں110ماڈل کورٹس نے آج مجموعی طور پر85مقدمات کا فیصلہ سنا دیا، دو مجرمان کو سزائے موت جبکہ14کو عمر قید کی سزا سنائی گئی۔

تفصیلات کے مطابق سائلین کو جلد از جلد انصاف کی فراہمی کیلئے پاکستان کے ماڈل کورٹس میں مقدمات کی تیز ترین سماعت کا سلسلہ تاحال جاری ہے، اس سلسلے میں110ماڈل عدالتوں نے آج کے دن مجموعی طور پر85مقدمات نمٹا دیئے۔

اے آر وائی نیوز کے نمائندے شاہ خالد کی رپورٹ کے مطابق تمام عدالتوں نے کل571گواہان کے بیانات قلمبند کیے، ثبوت اور گواہان کی روشنی میں عدالتوں نے دو مجرمان کو سزائے موت اورکو عمر قید کی سزا سنائی دیگر جرائم میں ملوث 25مجرمان کو53سال قید2357500 روپے جرمانہ ہوا۔

اس حوالے سے ڈی جی ماڈل کورٹس سہیل ناصر کا کہنا ہے کہ چیف جسٹس آصف سعید کھوسہ نے57نئے ماڈل کورٹس کی منظوری دے دی ہے۔

انہوں نے بتایا کہ چالیس ماڈل کورٹس پنجاب،16سندھ اور ایک بلوچستان میں قائم کردیا ہے، ڈی جی سہیل ناصر کے مطابق نئے ماڈل کورٹس24جون سے اپنےکام کا آغاز کریں گی۔

یاد رہے کہ چیف جسٹس آصف سعید خان کھوسہ نے ایک کیس میں ریمارکس دیئے تھے کہ 22 کروڑ آبادی کے لیے صرف 3ہزار ججز ہیں، ججز کی آسامیاں پر کی جائیں تو زیرالتواء مقدمات ایک دوسال میں ختم ہوجائیں گے، زیرالتوا مقدمات کا طعنہ عدالتوں کو دیا جاتا ہے جبکہ قصور وار عدالتیں نہیں کوئی اور ہے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں