The news is by your side.

Advertisement

مؤثر کرونا ویکسین بنانے والی کمپنی کا ملیریا ویکسین کے حوالے سے اہم اعلان

برلن: جرمنی کی کمپنی بائیو این ٹیک نے کرونا ویکسین کے بعد اب ملیریا سے بھی بچاؤ کی مؤثر ویکسین بنانے کا اعلان کر دیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق بائیو این ٹیک کووِڈ نائٹین کے خلاف اپنی کامیابی کو استعمال کرتے ہوئے mRNA ٹیکنالوجی استعمال کرتے ہوئے ملیریا کے لیے پہلی ویکسین تیار کرنا چاہتی ہے، کمپنی نے مچھر سے پیدا ہونے والی بیماری کے خاتمے کے لیے 2022 کے آخر میں کلینکل ٹیسٹنگ شروع کرنے کا عزم کر لیا ہے۔

بایو این ٹیک کے چیف ایگزیکٹو اوغور شاہن کا کہنا ہے کہ کرونا وبا کے خلاف رسپانس سے یہ بات سامنے آئی ہے کہ سائنس اور اختراع سے لوگوں کی زندگیاں بدلی جا سکتی ہیں، جب سب مل کر ایک مقصد کے لیے کام کرتے ہیں۔

انھوں نے کہا ہم HIV اور تپِ دق یعنی ٹی بی پر پہلے ہی کام کر رہے ہیں اور ملیریا تیسرا بڑا مرض ہے جس پر کام ابھی باقی ہے، ہر سال لوگوں کی بہت بڑی تعداد اس مرض سے متاثر ہوتی ہے، بہت سے لوگ مر جاتے ہیں بالخصوص جب مرض سنگین صورت اختیار کر جائے، جب کہ چھوٹے بچوں میں تو اس سے اموات کی شرح بہت زیادہ ہے۔

عالمی ادارۂ صحت کے مطابق 2019 میں دنیا بھر میں تقریباً 23 کروڑ افراد ملیریا سے متاثر ہوئے جن میں سے 4 لاکھ سے زیادہ افراد جان سے ہاتھ دھو بیٹھے، عالمی ادارے کا اندازہ ہے کہ اُس سال ملیریا سے ہونے والی اموات میں سے 67 فی صد پانچ سال سے کم عمر بچوں کی تھی، جب کہ 94 فی صد مریض اور اموات افریقا میں ہوئیں۔

البتہ شاہن کا کہنا ہے کہ یہ منصوبہ ابھی بالکل ابتدائی مرحلے میں ہے اور اس کی کامیابی کی فی الحال کوئی ضمانت نہیں دی جا سکتی، انھوں نے کہا کہ کمپنی سمجھتی ہے کہ کووِڈ 19 کے خلاف mRNA ویکسین بنانے سے حاصل کردہ تجربے کی بنیاد پر کہا جا سکتا ہے کہ یہ اس چیلنج سے نمٹنے کا یہ بہترین وقت ہے۔

واضح رہے کہ ملیریا مچھروں کے کاٹنے سے پھیلنے والا ایک انفیکشن ہے جو مدافعت کے نظام کو دھوکا دیتا ہے، اس لیے ویکسین کا ہدف اس کو سامنے لانا اور مدافعت کے نظام کو اس انفیکشن پر حملے کے قابل بنانا ہے۔

اِس وقت دنیا بھر میں ملیریا کی صرف ایک ویکسین Mosquirix دستیاب ہے، لیکن یہ صرف 39 فی صد تک مؤثر ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں