The news is by your side.

Advertisement

جائیداد ٹیکس کی وصولی کے لیے عدالتیں قائم کرنے کا فیصلہ

کراچی: سندھ کی صوبائی حکومت نے جائیداد کے ٹیکس وصولی کی مد میں انقلابی اقدامات کرنے کا فیصلہ کرلیا ہے، صوبائی وزیر مکیش چاؤلہ نے ٹیکس کور ٹ قائم کرنے اعلان کردیا۔

صوبائی وزیر برائے ایکسائز اینڈ ٹیکسیشن و انسداد منشیات اور پارلیمانی امور مکیش کمار چاؤلہ نے کہا ہے کہ جائیداد ٹیکس کی وصولی کے لئے مینول چالان جاری نہیں کیے جائیں گے اور محکمہ ایکسائز کے دفاتر میں افسران و عملے کی کمی کو پورا کیا جائے گا اور متعلقہ ڈائریکٹرز عملے کی کمی سے متعلق ڈائریکٹر جنرل ایکسائز اینڈ ٹیکسیشن کو باقاعدہ طور پر آگاہ کریں ۔

یہ بات آج انہوں نے اپنے دفتر میں ہونے والے ایک اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے کہی، انہوں نے یہ بھی کہا کہ ٹیکس کورٹ قائم کیے جائیں۔ اجلاس میں سیکرٹری ایکسائز اینڈ ٹیکسیشن وانسداد منشیات عبدالرحیم شیخ ڈائریکٹر جنرل ایکسائزاینڈٹیکسیشن شبیر احمد شیخ ڈائریکٹر ایکسائز اینڈ ٹیکسز اور دیگر افسران نے بھی شرکت کی ۔

صوبائی وزیر مکیش کمار چاؤلہ نے افسران کو ہدایت دی کہ وہ جائیداد یونٹس کی نشاندہی کریں اور گیسٹ ہاؤسز بشمول تجارتی اور نجی اسکولز کی جائیدادوں کو ٹیکس کے دائرے میں لائیں ۔انہوں نے مزید کہا کہ محکمہ کے افسران و عملہ جائیداد ٹیکس کے بقایاجات کی وصولی کے لئے اپنی کوششیں تیز کریں اور آئندہ اجلاس میں وہ نتائج دیکھنا چاہتے ہیں۔

اس موقع پر صوبائی وزیر نے افسران کے دفاتر میں عدم دستیابی کی خبروں کا نوٹس لیتے ہوئے ڈائریکٹر جنرل کو ہدایت دی کہ وہ ایسے افسران کے خلاف قانون کے مطابق کارروائی کریں اور دفاتر میں حاضری کو یقینی بنائیں۔ اجلاس میں صوبائی وزیر مکیش کمار چاؤلہ نے افسران پر زور دیا کہ وہ اپنے متعلقہ علاقوں میں ان جائیدادوں کی نشاندہی کریں جنہیں ابھی تک ٹیکس کے دائرے میں نہیں لایا گیا۔

انہوں نے کہا کہ کوئی بھی قانون سے بالاتر نہیں ہے اور افسران خزانے میں ریوینیو جمع کرانے کے لئے اپنی کوششیں تیز کریں ۔اجلاس میں جائیداد ٹیکس کی بہتر وصولی کے لئے ٹیکس کورٹ میں قائم کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے، اس موقع پر ڈائریکٹر جنرل ایکسائز ٹیکسیشن شببر احمد شیخ نے صوبائی وزیر کو جائیداد ٹیکس کی وصولی اور افسران کی حاضری یقینی بنانے کے لئے کئے گئے اقدامات کے بارے میں آگاہ کیا ۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں