The news is by your side.

Advertisement

بیٹنگ تجربہ کار بولنگ ناتجربہ کار ہے جس کا نقصان ہوسکتا ہے، مشتاق احمد

کراچی: قومی کرکٹ ٹیم کے سابق لیگ اسپنر مشتاق احمد نے کہا ہے کہ بولنگ کے مقابلے میں بیٹنگ میں تجربہ کار کھلاڑی ہیں، بولرز اتنے تجربہ کار نہیں جس کا نقسان ہوسکتا ہے۔

تفصیلات کے مطابق سابق لیگ اسپنر مشتاق احمد نے اسپورٹس روم میں گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ جنید خان سب سے سینئر کھلاڑی ہیں انہیں ذمہ داری لینا ہوگی، عامر وکٹ نہیں لیتا لیکن رنز روک کر دباؤ بڑھاتا ہے، عامر انگلینڈ کے خلاف پرفارم کرکے ورلڈ کپ ٹیم میں آئے گا تو فائدہ ہوگا۔

انہوں نے کہا کہ ون ڈے میچ میں بہت منصوبہ بندی کے ساتھ کرکٹ کھیلنا ہوتی ہے، حریف ٹیم عامر کو محتاط ہوکر کھیلنے کا پلان بناتی ہے اس لیے انہیں وکٹ نہیں ملتی، شاداب اپنی مکمل ورائٹی کے ساتھ گیند کرے تو فائدہ ہوگا۔

حریف ٹیم عامر کو محتاط ہوکر کھیلنے کا پلان بناتی ہے اس لیے انہیں وکٹ نہیں ملتی

مشتاق احمد

سابق لیگ اسپنر نے کہا کہ فخر زمان اور امام الحق کی جوڑی بہت اچھی ہے، دونوں اوپنرز کا رول بہت واضح ہے، جیت کے لیے ڈریسنگ روم کا اچھا ماحول بہت ضروری ہے، ہر کھلاڑی کو اپنا روم کا معلوم ہونا چاہئے۔

ایک سوال کے جواب میں مشتاق احمد نے کہا کہ کرکٹ جنگ نہیں ایک کھیل ہے اور اسے کھیل ہی کی طرح کھیلنا چاہئے، سابق کھلاڑیوں کو پاک بھارت میچ کو جنگ نہیں کہنا چاہئے، قومی ٹیم کو بھارت کے خلاف میچ جیتنے کی کوشش کرنی چاہئے۔

مشتاق احمد نے کہا کہ ورلڈ سے قبل انگلینڈ سے پانچ ون ڈے سے فائدہ ہوگا، انگلینڈ سے سیریز آرگنائز کرنے پر پی سی بی کو کریڈیٹ دینا چاہئے، اسپنرز مڈل اوور میں وکٹ لیں گے تو کامیابی ملے گی، قومی ٹیم میں ورلڈ کپ جیتنے کی مکمل صلاحیت موجود ہے، شعیب ملک کا پرفارم کرنا بہت ضروری ہے۔

انہوں نے کہا کہ 92 ورلڈ کپ جیتنا اعزاز کی بات تھی، عمران خان کی کپتانی میں کھیلنے والوں کا کیریئر بہت زبردست رہا، موجودہ دور میں میچ جیتنے کے لیے جارحانہ کرکٹ کھیلنا ہوگی۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں