The news is by your side.

نیب کا چوہدری پرویزالٰہی پر اختیارات سے تجاوز کرنے کا الزام

لاہور : قومی احتساب بیورو ( نیب ) نے اسپیکر پنجاب اسمبلی چوہدری پرویزالٰہی پراختیارات سے تجاوزکرنے کا الزام عائد کرتے ہوئے کہا ہے کہ انہوں نے نئی تقرریوں پرپابندی کےباوجود 29 افراد کو بھرتی کرایا۔

تفصیلات کے مطابق اسپیکر پنجاب اسمبلی چوہدری پرویز الٰہی کی مشکلات میں مزید اضافہ ہوگیا ، نیب لاہور نے چوہدری پرویز الٰہی کے خلاف اختیارات سے تجاوز کرنے کے کیس میں جواب جمع کرا دیا۔

نیب لاہور نے 9 صفحات پر مشتمل تفصیلی جواب لاہور ہائی کورٹ میں جمع کرایا، جس میں کہا گیا کہ چوہدری پرویز الٰہی اختیارات کا ناجائز استعمال کر کے کرپشن اور کرپٹ پریکٹسز کے مرتکب ہوئے، چوہدری پرویز الٰہی 1988 سے 1993 کے درمیان دو بار وزیر لوکل گورنمنٹ رہے۔ انہوں نے بطور وزیر لوکل گورنمنٹ اختیارات کا ناجائز استعمال کر کے 29 افراد کو بھرتی کرایا۔

نیب رپورٹ کے مطابق چوہدری پرویز الٰہی نے اپنے سرکاری لیٹر پیڈ کے ذریعے سیکرٹری لوکل گورنمنٹ کو مخلتف افراد بھرتی کرنے کا بھی حکم دیا جبکہ اختیارات کا غلط استعمال کرتے ہوئے گریڈ 16 اور گریڈ 17 میں اکاؤنٹس آفیسرز اور چیف آفیسرز بھرتی کرائے۔

رپورٹ میں کہا گیا کہ پرویزالٰہی نے شریک ملزمان جاوید قریشی اور ڈاکٹر مشیر احمد سے مل کر غیر قانونی بھرتیاں کیں جبکہ دونوں شریک ملزمان وفات پا چکے ہیں، چوہدری پرویز الٰہی اور شریک ملزمان نے من پسند بھرتیوں کے لیے مقررہ عمر میں رعایت کے لیے بورڈ سے اجازت نہیں لی تھی اور نئی تقرریوں پر پابندی کے باوجود 29 افراد کو بھرتی کروایا۔

نیب کا کہنا ہے کہ چوہدری پرویز الٰہی کے خلاف اختیارات کے ناجائز استعمال کی انوسٹی گیشن مکمل کر لی گئی ہے اور ریفرنس حتمی منظوری کے لیے چیئرمین نیب کو ارسال کر دیا گیا ہے۔ نیب کے پاس چوہدری پرویز الٰہی کے خلاف کیس ثابت کرنے کے لیے شواہد موجود ہیں۔ نیب نے تمام قانونی تقاضے پورے کرنے کے بعد چوہدری پرویز الٰہی کے خلاف تحقیقات کی ہیں۔

نیب نے استدعا کی ہے کہ ہائیکورٹ چوہدری پرویز الٰہی کی درخواست خارج کرے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں