The news is by your side.

Advertisement

تھرپارکر: خواتین کو سبزیاں اور پھل کاشت کرنے کی خصوصی تربیت کا آغاز

تھرپارکر: سماجی تنظیم رورل ڈویلپمنٹ ایسوسی ایشن (آر ڈی اے) کی جانب سے تھرپارکر کی خواتین کو مقامی سطح پر سبزیاں اور پھل کاشت کرنے کی تربیتی مہم کا آغاز کر دیا گیا ہے۔

اے آر وائی نیوز کے نمائندے ولی نھڑیو کے مطابق تھر میں جاری غذائیت کی کمی کے شکار باشندوں کے لئے مقامی سماجی تنظیم (آر ڈی اے ) نے تھر کے گوٹھوں قصبوں میں موجود کنوؤں کے قریب سبزیاں اور پھل کاشت کرنے کے لیے خواتین کو تربیت دینے کا منصوبہ شروع کیا ہے کیوں کہ تھر کے باشندے سبزیاں اور پھل خریدنے کی قوت نہیں رکھتے او غذائی قلت کا شکار ہیں۔

تھر پارکر قحط سالی سے موروں کی اموات کا سلسلہ نہ رک سکا

سماجی ادارہ (آر ڈی اے) کی جانب سے تھر کے مختلف دیہی علاقوں میں پینے کے صاف پانی کی فراہمی کے ساتھ ساتھ گھریلو سطح پر سبزیان اور پھل کاشت کرنے کے چھوٹے چھوٹے منصوبوں کا بھی آغاز کر دیا گیا ہے تھر کے تین تحصیلوں جن میں اسلام کوٹ اور ڈیپلو میں پینے کے صاف پانی کی فراہمی کے لئے شمشی توانائی پر چلنے والے سمر پمپ اور ہینڈ پمپ نصب کئے گئے ہیں۔

یاد رہے کہ ضلع تھرپارکر کے مختلف دیہاتوں اور قصبوں میں گزشتہ سال کے دوران غذائی قلت سے جاں بحق ہونیوالوں کی تعداد ساڑھے تین سو سے بھی تجاوز کرگئی تھی اور رواں سال  سرکاری اعدادوشمار کے مطابق 101معصوم بچے جاں بحق ہوچکے ہیں۔

تھر پارکر: صوبائی حکومت کی مجرمانہ غفلت یا کچھ اور،بچوں کی اموات 95 ہوگئیں

خیال رہے کہ 22 ہزار مربع کلومیٹر پر پھیلے تھر کے 17 لاکھ باسی کئی سالوں سے قحط سالی اور غذائی قلت کا شکار ہیں اور تھرپارکر میں 80فیصد سے زائد آبادی موجودہ صورتحال میں غربت کی لکیر سے نیچے زندگیاں بسر کرنے پر مجبور ہیں۔


خبر کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں، مذکورہ معلومات کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہنچانے کے لیے سوشل میڈیا پر شیئر کریں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں