The news is by your side.

Advertisement

اپوزیشن کے ایک طرف 48 گھنٹے کا الٹی میٹم، دوسری طرف تاخیری حربے

اسلام آباد: اپوزیشن نے ایک طرف 48 گھنٹے کا الٹی میٹم دیا ہوا ہے، دوسری طرف تاخیری حربے استعمال کرنے لگی ہے۔

تفصیلات کے مطابق ذرائع نے کہا ہے کہ پاکستان مسلم لیگ ن نے تحریک عدم اعتماد سے پہلے اجلاس کی ریکوزیشن کی تجویز دے دی ہے۔

اپوزیشن کے چند رہنما براہ راست تحریک لانے کے حق میں ہیں، تاہم لیگی ذرائع کے مطابق ن لیگ نے تجویز دی ہے کہ پہلے اجلاس طلب کریں پھر عدم اعتماد کی تحریک جمع کرائیں۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ اجلاس طلب کرنے سے اسپیکر کو 21 روز تک ووٹنگ نہ کرانے کا موقع ملے گا۔ خیال رہے کہ ارکان سے دستخط دونوں ریکوزیشن اور تحریک پر لیے گئے ہیں۔

بلاول نے وزیر اعظم کو استعفیٰ دینے کے لیے 5 دن کی مہلت دے دی

واضح رہے کہ پی ڈی ایم کی جانب سے وزیر اعظم کو مستعفی ہونے کے لیے 48 گھنٹوں کا الٹی میٹم دیا گیا ہے، جب کہ آج پاکستان پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے عمران خان کو مستعفی ہونے کے لیے 5 دن کی مہلت دے دی ہے۔

بلاول نے بہاولپور میں عوامی مارچ سے خطاب میں وزیر اعظم کو مخاطب کرتے ہوئے کہا آپ کے پاس پانچ دن ہیں، خود ہی مستعفی ہو جائیں، نہیں تو پانچ دن بعد ہم عدم اعتماد کی تحریک لے کر آئیں گے۔

پی پی چیئرمین نے کہا ’اگر آپ نے استعفیٰ نہ دیا تو پانچ دن بعد ہم اسلام آباد پہنچ کر عدم اعتماد لائیں گے۔‘

انھوں نے وزیر اعظم سے کہا اگر آپ میں ہمت ہے تو اسمبلی توڑیں، الیکشن کرائیں اور مقابلہ کریں، ہم دکھائیں گے کہ عوام کس کے ساتھ ہیں، 5 دن بعد ہمارے نمبرز پورے ہو چکے ہوں گے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں