پاکستان اسٹیل ملز کا بحران شدید تر، 16 ماہ سے اسیٹل ملز کی پیداوار صفر -
The news is by your side.

Advertisement

پاکستان اسٹیل ملز کا بحران شدید تر، 16 ماہ سے اسیٹل ملز کی پیداوار صفر

کراچی : پاکستان اسٹیل ملز کا بحران سنگین ہوگیا اور ملازمین شدید مشکلات کا شکار ہیں، ملازمین پریس کلب اور اہم شراہوں پر ادارے کے یونیفارم میں بھیک مانگ پر غور شروع کردیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق سولہ ماہ سے اسیٹل ملز کی پیداوار صفر ہے جبکہ ملازمین گزشتہ پانچ ماہ سے تنخواہوں سے محروم ہیں، عدم ادائیگیوں کے باعث پانی ، بجلی اور گیس کے کنکشنز منقطع کئے جانے کا خدشہ ہے، ریٹائرڈ ملازمین واجبات کے انتظار میں انتقال کر گئے۔

اسٹیل ملز کا آڈٹ کرنے والے اداروں کا کہنا ہے کہ ادارے کے مالی اور انتظامی مسائل انتہائی خراب ہوگئے ہیں، اسٹیل ملز کی نجکاری تقریبا ناممکن ہوتی جارہی ہے۔

آڈیٹرز کی رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ اسٹیل ملز کچھ عرصے میں ناکارہ اثاثہ بن جائے گی۔


مزید پڑھیں : پاکستان اسٹیل ملز کے ملازمین کو2 ماہ کی تنخواہ ادا کرنے کی منظوری


اسٹیل ملز ذرائع کے مطابق واجبات کی عدم ادائیگیوں سے انسانی بحران پیدا ہوجانے کا خدشہ ہے۔

دوسری جانب پاکستان اسٹیل ملز کی انتظامیہ نے حکومت کو خبردار کیا ہے کہ گزشتہ کئی ماہ سے تنخواہوں، طبی سہولتوں اور دیگر واجبات کی عدم ادائیگی کی وجہ سے ملازمین میں بے چینی بڑھتی جارہی ہے اور آگے چل کر یہ امن و امان کے لیے مسئلہ بھی بن سکتا ہے۔


مزید پڑھیں : ایک بار پھر پاکستان اسٹیل ملز کی نجکاری کا فیصلہ


یاد رہے کہ رواں سال مئی میں وفاقی حکومت نے پاکستان اسٹیل ملز سندھ حکومت کو فروخت نہ کرنے کا فیصلہ کیا تھا اور وزیر نجکاری محمد زبیر نے اے آر وائی نیوز سےخصوصی گفتگو کرتے ہوئے کہا تھا کہ اسٹیل ملز پر 200 ارب روپے کے واجبات ہیں۔

واضح رہے کہ سندھ حکومت کے غیرسنجیدہ رویے کے باعث نجکاری بورڈ نے پاکستان اسٹیل ملز سندھ حکومت کو فروخت نہ کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں