site
stats
کھیل

پاکستانی انجینئرزکا کارنامہ، مشکوک باؤلنگ ایکشن پکڑنے والا آلہ تیار

گزشتہ ایک دہائی سے باؤلرز کو جو مسائل درپیش ہیں اس میں مشکوک باؤلنگ ایکشن سب سے اہم ہے جس سے مرلی دھرن سے سعید اجمل تک کے لیجنڈز اسپینرز کو گزرنا پڑا جب کہ ایسے باؤلرز کی فہرست طویل ہے جنہیں عالمی مقابلوں میں مشکوک قرار دے کر نئے سرے سے اکیڈمی میں بولنگ ایکشن کو درست کرنا پڑا۔

باؤلرز کے مشکوک ایکشن کی بین الاقوامی مقابلوں میں پکڑ دراصل ڈومیسٹک کرکٹ کی انتظامی اور کوچنگ کی سطح پر بنیادی غلطیوں کی جانب اشارہ کرتی ہے کہ ایک باؤلر اسکول لیول سے ہوتا ہوا بین الاقوامی ٹیم میں جگہ بنالیتا ہے اور دیکھتے ہی دیکھتے ہی کامیابی کی منازل بھی طے کرلیتا لیکن اچانک پتا چلتا ہے کی اس کے باؤلنگ ایکشن میں جھول ہے جسے دور کیے بغیر اس کی کرکٹ میں واپسی ممکن نہیں ہو گی۔

کرکٹ میں نئے قوانین کے بعد اسکول، کالج یا ڈومیسٹک لیول پر ہی باؤلرز کے ایکشن کو جانچنا جوئے شیر لانے کے مترادف ہے کیوں کہ ایمپائر کی نگاہ 15 ڈگری کا زاویہ ناپنے میں اکثر ناکام نظر آتی ہے اور ڈومیسٹک لیول پر ایسی کوئی ٹیکنالوجی دستیاب نہیں جو اس مسئلے کو جانچ سکے۔

cricflex2

تاہم پاکستانی انجینئرز کی ٹیم نے ایک ایسی ٹیکنالوجی متعارف کرادی ہے جس سے باؤلنگ کے وقت بازو کا زاویہ مقررہ وقت کے دوران درست طریقے سے جانچا جاسکتا ہے اسے آستین کی طرح بازو پر پہنا جا سکتا ہے جس میں نہایت مختصر بایو میٹرک ڈیٹیکٹو لگے ہوتے ہیں جو کہنی کی حرکت سے سگنل کو موصول کر کے موبائل ایپ یا کمپیوٹر کی اسکرین پر ڈگری کی شکل میں واضح کر دیتی ہے۔

کرکٹ فلیکس کے نام سے کی گئی اس ایجاد کو باؤلر دستانوں کی طرح کہنی تک بآسانی پہن لیتا ہے اور پھر کھلاڑی کی کہنی کو تین مختلف زاویوں پر رکھنے کا کہا جاتا ہے جسے آلہ ریکارڈ کر لیتا ہے اور باؤلنگ کے دوران جیسے ہی باؤلر بال پھینکتا ہے آلہ کہنی سے موصول سنگنل کو ریکارڈ کردہ زاویے سے پرکھ کر فوری نتیجہ دے دیتا ہے۔

cricflex1

پاکستانی انجینئرز نے اس پراڈکٹ کو 2015 میں ایم ٹی اے میں پیش کیا تھا جب کہ امریکا میں بھی اس پراڈکٹ کو متعارف کرایا جاچکا ہے تاہم ابھی اس آلے کے نتائج کی صحت کو مزید پرکھنے اور جانچنے کے لیے لاہور یونیورسٹی آف مینیجمنٹ سائنس کی لیب میں ٹیسٹ کرنے کا فیصلہ کیا ہے یہ لیب پی سی بی کی جانب سے قائم کی گئی ہے۔

پاکستانی نوجوانوں کو امید ہے کہ پی سی بی کی لیب سے منظوری کے بعد یہ پراڈکٹ ڈومیسٹک سطح پر ہی باؤلرز کے ایکشن کی جانچ پڑتال کی جا سکے گی یہ پراڈکٹ مختلف کرکٹ اکیڈمیز کو بھی بھیجی گئی ہے جو نوجوان باؤلرز کے لیے کافی مفید رہے گی اور پاکستانی باؤلرز کو ایکشن کے حوالے سے درپیش شکوک و شبہات اور بار بار کے تجربوں سے نجات ملے گی۔

cricflex3

واضح رہے کہ جیسے جیسے کرکٹ میں تیزی، مقبولیت اور جدت آتی جا رہی ہے ویسے ویسے نئے مسائل بھی سامنے آ رہے ہیں جس کے لیے نئے قوانین مرتب کیے جارہے ہیں، وہ قوانین چاہے ایک اوور میں ایک باؤنسر کرانے کی حد ہو یا بلے باز کے کندھے سے اونچی بال کروانے کا معاملہ ہو یا پھر پاور پلے ہو سارے قوانین کا تعلق باؤلرز سے ہوتا ہے جس کے باعث بلے باز بآسانی رنزز کے ڈھیر لگا لیتے ہیں جس کے باعث 50 اوورز کے میچ میں 300 سے زائد رنز بنانا عام ہو گیا۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top