The news is by your side.

Advertisement

پاکستانی فلم انڈسٹری کے مشہور موسیقار مصلح الدین کی برسی

مصلح الدین کی زندگی کا سفر 7 اگست 2003 کو برمنگھم (برطانیہ) میں‌ ہمیشہ کے لیے تمام ہوا اور فلمی دنیا ایک باصلاحیت موسیقار سے محروم ہوگئی۔ آج مصلح الدین کی برسی منائی جارہی ہے۔

پاکستان کے اس مشہور فلمی موسیقار نے 1938 میں کلکتہ میں آنکھ کھولی۔ ڈھاکا یونیورسٹی سے ایم اے کیا اور پاکستان آگئے جہاں لاہور شہر میں‌ فلمی صنعت کے لیے موسیقار کی حیثیت سے کام شروع کیا۔ یہاں ان کی ملاقات ہدایت کار لقمان سے ہوئی جنھیں مصلح الدین نے اپنی بنائی ہوئی دھنیں سنائیں تو انھوں نے اپنی فلم ’’آدمی‘‘ کی موسیقی ترتیب دینے کے لیے انھیں‌ منتخب کرلیا۔

یہ فلم کام یاب رہی اور مصلح الدین کی موسیقی کا بھی خوب چرچا ہوا جس کے بعد انھیں فلم راہ گزر، ہم سفر، زمانہ کیا کہے گا، دال میں کالا، دل نے تجھے مان لیا، جوکر، جوش، جان پہچان کی موسیقی ترتیب دینے کا موقع ملا اور ان کی کام یابی کا سفر جاری رہا۔

فلم ہم سفر کے لیے بہترین موسیقی ترتیب دینے پر مصلح الدین کو نگار ایوارڈ بھی دیا گیا۔

مصلح الدین نے مغربی اور عربی موسیقی سے خوب استفادہ کیا، لیکن ان میں بنگالی طرز کی چاشنی شامل کرکے اسے انفرادیت عطا کردیتے تھے اور یہ ان کی بڑی مہارت اور اپنے فن میں‌ کمال تھا۔

Comments

یہ بھی پڑھیں