The news is by your side.

Advertisement

برطانیہ فلسطینی عوام سے معافی مانگے، محمود عباس

نیویارک : فلسطینی صدر محمود عباس نے برطانیہ سے معافی مانگنے اور 2017ء کو اسرائیلی قبضے سے آزادی کا سال قرار دینے کا مطالبہ کردیا۔

فلسطینی صدر محمود عباس نے جنرل اسمبلی سے خطاب میں عالمی رہنماؤں سے فلسطین کو ایک علیحدہ خود مختار ریاست کے طور پر تسلیم کرنے کا مطالبہ کیا، انکا کہنا تھا کہ وہ لوگ جو دو ریاستی حل کے حامی ہیں انہیں چاہیے کہ وہ ایک نہیں دونوں ریاستوں کو تسلیم کریں۔

اپنے خطاب میں فلسطینی صدر نے برطانیہ سے انیس سو سترہ کے بال فورڈ اعلامیے پر معافی کا مطالبہ کیا، بال فورڈ اعلامیہ فلسطینی سرزمین پر ایک یہودی ریاست کے قیام کی توثیق کرتا ہے، ’ہم نے برطانیہ سے کہا ہے کہ اس بدنام زمانہ اعلامیے کو اگلے برس سو سال مکمل ہو رہے ہیں اور یہ موقع ہے اس سے سبق سیکھنا چاہیے۔

انھوں نے کہا کہ اگلے برس فلسطینی علاقوں پر اسرائیلی قبضے کو پچاس سال مکمل ہو جائیں گے اس وجہ سے اقوام متحدہ کو چاہیے کہ وہ 2017ء کو اسرائیلی قبضے سے آزادی کا سال قرار دے۔

صدر محمود عباس نے عالمی برادری سے درخواست کی کہ وہ ایک خود مختار فلسطینی ریاست کے قیام کے لیے بڑھ چڑھ کر کوششیں کرے، امن کے قیام کے لیے ہم کھلے دل کے ساتھ ہر طرح سے تیار ہیں۔

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں