site
stats
پاکستان

دو نجی ٹی وی چینلز کے رمضان پروگرامز پر پابندی عائد

اسلام آباد: پاکستانی میڈیا الیکٹرانک ریگولیٹری اتھارٹی (پیمرا) نے ضابطہ اخلاق کی خلاف ورزی کے باعث دو نجی ٹی وی چینلز کے رمضان سے متعلق پروگرام پر تاحکم ثانی پابندی عائد کردی۔

پیمرا نے پابندی کا باقاعدہ نوٹی فکیشن جاری کردیا جس کے تحت ایک نجی ٹی وی کے پروگرام ‘‘رمضان ہمارا ایمان، میزبان حمزہ علی عباسی ‘‘ اور دوسرے نجی ٹی وی کے پروگرام ‘‘عشق رمضان، میزبان شبیر ابوطالب‘‘  کے جمعہ سے نشر ہونے پر پابندی عائد کردی گئی ہے۔

Pemra

پیمرا کا کہنا ہے کہ 4مئی کو تمام ٹی وی چینلز کو رمضان ٹرانسمیشن سے متعلق ہدایات جاری کی گئی تھیں کہ وہ رمضان نشریات ضابطہ اخلاق کی حدود میں رہتے ہوئے پیش کریں بصورت دیگر فوری کارروائی عمل میں لائی جائےگی لیکن ان دونوں پروگرامز میں پارلیمنٹ کے متفقہ فیصلوں پر بے موقع گفتگو اور جواباً ایسی گفتگو کرنے والوں کے خلاف عدالت لگا کر قتل و غارت کے فتوے نشر ہونے لگے۔

pemra 2

پیمرا کے مطابق صرف چار دنوں کے اندر ان دونوں پروگرامز سے متعلق پیمرا کے ٹوئٹر اکاؤنٹ، کال سینٹر، ای میل، فیس بک ،ایس ایم ایس سروس اور واٹس ایپ پر 1132 شکایات موصول ہوئیں کہ رمضان نشریات کی ریٹنگ کے لیے رمضان المبارک کے کے تقدس کو پامال کیا جارہا ہے اور ان پروگرامز میں متنازع اور فرقہ وارانہ گفت گو کی جارہی ہے۔

نوٹی فکیشن کے مطابق صورتحال کو مزید خرابی سے بچانے اور ناظرین کی دل آزاری کے سبب دونوں پروگرامز پر فوری طور پر پابندی عائد کردی گئی ہے۔

پیمرا کے مطابق پابندی کے فیصلے پر جمعے سے عمل ہوگا، اگر پروگرام نشر ہوئے تو دونوں نجی چینلز کی نشریات بند کردی جائیں گی جس کے احکامات متعلقہ ڈسٹری بیوشن نیٹ ورکس کو جاری کردیے گئے ہیں۔

پیمرا کا کہنا ہے کہ دونوں پروگرامز کے میزبان حمزہ علی عباسی، شبیر ابوطالب سمیت پروگرام کی مہمان شخصیت کوکب نورانی اوکاڑی نے اگر کسی اور ٹی وی چینل پر فرقہ ورانہ اور متنازع گفت گو تو اس پروگرام کو بھی بند کردیا جائےگا۔

نوٹی فکیشن کے مطابق تینوں افراد کو 20جون کے لیے پیمرا کراچی کونسل میں حاضر ہونے کے سمن جاری کردیے گئے ہیں تاکہ وہ پیش ہو کر ایسےمتنازع بیانات پر وضاحت دیں۔

دریں اثنا دونوں چینلز پر رمضان ٹرانسمیشن کسی اور اینکر کے ساتھ چلانے پر کوئی پابندی نہیں ہوگی اگر وہ ضابطہ اخلاق کے مطابق عمل کریں۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top