The news is by your side.

Advertisement

سیاست کے فیصلے عدالتوں میں ہونا اچھی روایت نہیں: وزیر اعظم

بہاولپور: وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی کا کہنا ہے کہ سیاست کے فیصلے عدالتوں میں ہونا اچھی روایت نہیں۔ نواز شریف کو آمر کے دور میں بھی سزا دی گئی تھی، انہیں سزا دینے والے ججز اور آمر آج کہاں ہیں؟

تفصیلات کے مطابق وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی نے جلال پور پیر والا ۔ اچ شریف سیکشن کا افتتاح کردیا۔ اچ شریف منصوبے پر 5 ارب روپے لاگت آئی ہے۔

اپنے خطاب میں وزیر اعظم کا کہنا تھا کہ مسلم لیگ ن نے ماضی کے رکے ہوئے منصوبے مکمل کیے۔ جولائی میں عوامن لیگ کو ایک بار پھر کامیاب بنائیں گے۔ ’70 سال میں نواز شریف کے کاموں کا پلڑا ماضی سے بھاری ہے‘۔

انہوں نے کہا کہ آئین میں ترمیم کوئی ایک جماعت تنہا نہیں کر سکتی۔ ترمیم کا فیصلہ اتفاق رائے سے کیا جاتا ہے۔ نئے صوبے کے لیے تمام جماعتوں کو مل کر ترمیم کرنا ہوگی۔

وزیر اعظم کا کہنا تھا کہ نیلم جہلم منصوبہ 4 حکومتوں کے دوران بھی مکمل نہ ہوسکا۔ نیلم جہلم منصوبہ بھی نواز شریف حکومت نے مکمل کیا۔ ’مسائل ہیں تو آپس میں بیٹھ کر ان کو حل کیا جا سکتا ہے۔ ہارس ٹریڈنگ کا حصہ بننے کی ضرورت نہیں تھی‘۔

انہوں نے کہا کہ مشکلات آج بھی ہیں لیکن بجلی پیدا کرنے کی کوئی مشکل نہیں ہے۔ موجودہ حکومت نے 10 ہزار 400 میگا واٹ بجلی کے منصوبے مکمل کیے۔ مشرف، زرداری، عمران خان کی حکومتوں نے کوئی کام نہیں کیا۔

وزیر اعظم کا کہنا تھا کہ حکومت کی مدت کا الٹی میٹم دینے والے نام نہاد لیڈر آج گھر بیٹھے ہیں۔ جھوٹ کی سیاست کو لوگ پسند نہیں کرتے۔ مسلم لیگ ن کی حکومت اپنے 5 سال پورے کرنے جا رہی ہے۔ ’ماضی میں حکومتوں کی ترقیاتی کام کرنے کی نیت ہی نہیں تھی‘۔

انہوں نے کہا کہ ن لیگ کی حکومت نے پاکستان کی پہلی موٹر وے بنائی تھی۔ آج ملک میں 17 سو کلو میٹر موٹر وے بن رہی ہے۔ جولائی کا الیکشن ثابت کر دے گا اکثریت میں کون ہے۔

وزیر اعظم کا مزید کہنا تھا کہ سیاست کے فیصلے عدالتوں میں ہوں یہ اچھی روایت نہیں، سیاست کے فیصلے پولنگ اسٹیشن اور عوام کرتے ہیں۔ ماضی میں بھی نواز شریف پر الزامات اور سزائیں دی گئیں۔ آج وہ آمر، ججز کہاں ہیں اور نواز شریف کہاں ہے۔ ’ایسے فیصلوں کی کبھی عزت نہیں ہوتی‘۔


خبر کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں۔ مذکورہ معلومات کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہچانے کے لیے سوشل میڈیا پر شیئر کریں۔ 

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں