site
stats
خواتین

پہلی بار ماں بننے والی خواتین کے دماغ میں تبدیلی

ماہرین کا کہنا ہے کہ پہلی بار ماں بننا خواتین کے دماغ کے خلیات کو تبدیل کردیتا ہے اور وہ قدرتی طور پر اپنے بچوں کے متعلق سوچنے لگتی ہیں۔

نیچر نیورو سائنس نامی جریدے میں چھپنے والے تحقیقی مضمون کے مطابق پہلی بار حاملہ ہونے والی خواتین کے دماغ کے خلیات و افعال میں تبدیلی آتی ہے جس کے بعد وہ گزشتہ زندگی سے مختلف سوچنے لگتی ہیں۔

ماہرین کے مطابق پہلی بار حمل ہونے کے بعد خواتین کے دماغ میں موجود سرمئی رنگ کے مادے (گرے میٹر) میں کمی آنے لگتی ہے۔ دماغ کا یہ حصہ دیکھنے، سننے، یادداشت، جذبات، بولنے، خود پر قابو پانے اور فیصلہ سازی میں کردار ادا کرتا ہے۔

woman-2

ماہرین کا کہنا ہے کہ جب اس سرمئی حصہ میں کمی یا زیادتی ہوتی ہے تو سوچنے کا انداز بدل جاتا ہے۔

سائنسی و طبی ماہرین نے اس کے لیے ایسی خواتین کا دماغی اسکین کیا جو پہلی بار ماں بننے والی تھیں۔ 5 سال تک جاری رہنے والی اس تحقیق کے لیے خواتین کے حاملہ ہونے سے قبل، حمل کے دوران، اور بچے کی پیدائش کے بعد بار بار دماغ کا اسکین کیا گیا۔

مزید پڑھیں: دوران حمل ان عادات سے پرہیز ضروری ہے

مضمون میں بتایا گیا کہ جذبات میں تبدیلی کے بعد مائیں اپنے بچوں کو اپنی زندگی کا اہم حصہ خیال کرنے لگتی ہیں اور ان کی سوچوں کا دائرہ کار اپنے بچے کے گرد گھومنے لگتا ہے۔

ماہرین کے مطابق دماغ میں یہ تبدیلی دیرپا ہوتی ہے اور کافی عرصہ تک موجود رہتی ہے۔

مضمون کے مطابق اسی قسم کا دماغی اسکین ان افراد کا بھی کیا گیا جو پہلی بار باپ بننے والے تھے، تاہم باپ بننے سے قبل یا بعد میں ان کے دماغ میں کسی قسم کی کوئی تبدیلی نہیں دیکھی گئی۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top