کام کرنے والوں کو عدالتوں میں گھسیٹنے کی روایت بن گئی ہے: وزیر اعظم -
The news is by your side.

Advertisement

کام کرنے والوں کو عدالتوں میں گھسیٹنے کی روایت بن گئی ہے: وزیر اعظم

ڈیرہ غازی خان: وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی کا کہنا ہے کہ کام کرنے والوں کو عدالتوں میں گھسیٹنے کی عجیب روایت بن گئی۔ سیاست کے فیصلے پولنگ اسٹیشنوں میں ہونے دیں۔

تفصیلات کے مطابق وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی نے ڈیرہ غازی خان میں تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ عوام کی نواز شریف سے محبت دیکھ کر یقین ہے یہاں سے مسلم لیگ ن کامیاب ہوگی۔

انہوں نے کہا کہ نواز شریف اور ن لیگ کے کام عوام کے سامنے ہیں۔ دو سڑکیں 18 ارب کی لاگت سے تعمیر ہو رہی ہیں۔ ’یہ منصوبے ماضی کی حکومتیں بھی کر سکتی تھیں‘۔

وزیر اعظم کا کہنا تھا کہ کسی سیاست دان نے مسائل حل کرنے کی کوشش کی ہے تو وہ نواز شریف ہیں۔ ’سیاست کے فیصلے پولنگ اسٹیشن میں ہوتے ہیں عدالتوں میں نہیں۔ سیاست اور جمہورت مضبوط ہوگی تو مسائل حل ہوں گے‘۔

انہوں نے کہا کہ کئی سال کی خرابیاں ایک دم سے ٹھیک نہیں ہوسکتیں۔ ملک میں سی پیک جاری ہے اور جاری رہے گا، اس منصوبے سے ترقی ہوگی اور نوجوانوں کو روزگار ملے گا۔ ہم نے ہمیشہ شرافت کی سیاست کی، کسی کی بے عزتی نہیں کی، پگڑی نہیں اچھالی۔

وزیر اعظم نے مزید کہا کہ پاکستان کے باشعور عوام حکومت ہٹانے کا جواب ضرور لیں گے۔ عوام کا فیصلہ ہمیشہ سر آنکھوں پر رکھا جاتا ہے۔ ’گیس کے جتنے منصوبے آج لگ رہے ہیں 65 سال کی تاریخ میں نہیں لگے۔ آئندہ 20 گیس کی کمی نہیں ہوگی‘۔

انہوں نے کہا کہ ہم نے ہمیشہ عدالتوں کی عزت کی اور کرتے رہیں گے۔ جہاں سیاسی استحکام اور عوام کا اعتماد نہیں ہوگا تو ملک ترقی نہیں کرے گا۔ ’ایوان بالا کا چیئرمین وہ شخص ہے جو ووٹ خرید کر عہدے پر پہنچا ہو۔ ن لیگ نے ایک روپیہ بلا واسطہ یہ بالواسطہ الیکشن میں خرچ نہیں کیا، سب نو منتخب سینیٹر حلفیہ بیان دیں سینیٹر بننے کے لیے کسی ایم پی اے کو نہیں خریدا‘۔

انہوں نے کہا کہ ان سب چیزوں کا ہم نے ووٹ کے ذریعے خاتمہ کرنا ہے۔ ہمیں منافقت کی سیاست ختم کرنی ہے، پیسے لیے ہیں کھل کر بتائیں۔ ہم نے اصولوں پر کھڑے رہ کر مقابلہ کرنا ہے۔


خبر کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں۔ مذکورہ معلومات کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہچانے کے لیے سوشل میڈیا پر شیئر کریں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں