The news is by your side.

Advertisement

15 اگست سے تعلیمی ادارے کھولنے کا مطالبہ

لاہور/ کراچی : پرائیویٹ اسکولزفیڈریشن  اور چیئرمین آل سندھ پرائیویٹ اسکولز اینڈ کالجز ایسوسی ایشن نے حکومت سے فوری اسکول کھولنے کا مطالبہ کردیا اور کہا کروڑوں بچوں کا تعلیمی عمل رکا ہوا ہے۔

تفصیلات کے مطابق پرائیویٹ اسکولزفیڈریشن نے اسکول کھولنےسےمتعلق اعلامیہ جاری کردیا ہے ، جس میں کہا گیا ہے کہ حکومت15اگست سےتمام اسکول کھول دے، حکومت نےاسکول نہ کھولےتوخوداسکول کھول دیں گے۔

اعلامیے میں کہا گیا کہ اسکول کھولنےوالےاداروں کوقانونی تحفظ دیاجائےورنہ لانگ مارچ کیاجائےگا، پرائیویٹ اسکول فیڈریشن پریس کانفرنس سےاحتجاج ریکارڈ کرا رہی ہے۔

کاشف مرزا کا کہنا تھا کہ تاریخ میں آج تک کوئی حکومت تعلیم کےلیےسنجیدہ نہیں ہوئی، کوروناکےنام پرتعلیم کےساتھ جوکیاگیاوہ انتہائی افسوسناک ہے، اسکول کھولنےکےلیےایس او پیزدیے مگر حکومت سنجیدہ نہیں، 5کروڑ بچے اسکول جانے سے محروم ہوچکے ہیں۔

پریس کانفرنس میں انھوں نے کہا حکومت کی طرف سے100کتب کی پابندی پرساتھ ہیں، کتابیں طلبا کے مستقبل کے لیے خطرناک ہیں۔

کاشف مرزا نے مطالبہ کیا کہ پنجاب کےوزیرتعلیم فوری مستعفی ہوں، مدارس بچوں سےامتحانات لےسکتےہیں تو حکومت کیوں نہیں، حکومت نےاربوں کی فیس لےکرامتحانات نہیں لیے۔

دوسری جانب  چیئرمین آل سندھ پراؤیٹ اسکولز اینڈ کالجز ایسوسی ایشن حیدرعلی نے  بھی تعلیمی ادارے فوری کھولنے کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ  کہ تعلیمی اداروں کی مسلسل بندش منظور نہیں، چھ ماہ سے کروڑوں بچوں کا تعلیمی عمل رکا ہوا ہے، اسکول بند ہونے سے لاکھوں بچے چائلڈ لیبر کا شکار ہوگئے ہیں۔

انھوں نے کہا کہ پہلے ہی دو کروڑ سے زیادہ بچے اسکولز سے باہر ہیں ، چائلڈ لیبر بچوں کا اسکول میں واپس آنا مشکل ہے، مدارس اور یونیورسیٹیز کے امتحانات اس کے ساتھ کھولے جاسکتے ہیں، نجی اسکولز کی مالی مشکلات کا احساس حکومت کی ذمہ داری ہے۔

حیدرعلی کا کہنا تھا کہ وزیراعظم پاکستان، اور نیشنل کوارڈینیش کونسل فوری طور پر تعلیمی ادارے کھولنے کا اعلان کریں اور تعلیمی اداروں سے متعلق واضح اور دوٹوک پالیسی کا اعلان کیا جائے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں