The news is by your side.

Advertisement

تحریکِ انصاف کا نیب قوانین میں ترامیم کو سپریم کورٹ میں چیلنج کرنے کا اعلان

اسلام آباد : تحریکِ انصاف نے نیب قوانین میں ترامیم کو سپریم کورٹ میں چیلنج کرنے کا اعلان کردیا، فواد چوہدری نے کہا آصف زرداری، نواز شریف، شہبازشریف ، مریم نواز سب نے این آر او ٹو لے لیا۔

تفصیلات کے مطابق تحریک انصاف کے رہنما فواد چوہدری نے پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا آئی ایم ایف سےانکی ڈیل نہیں ہورہی اس لئے مہنگائی ہے، ان کا وزیرخزانہ امریکی سفیرسےکہتاہےکہ ہمارامعاہدہ کرائیں۔

فواد چوہدری کا کہنا تھا کہ ڈر لگ رہاہے کہ یہ ملک کو کس طرف لیکرجائیں گے ،اتنے نالائق ہیں انہیں کچھ سمجھ ہی نہیں آرہاکہ کرناکیاہے، پاکستان سری لنکا جیسی صورتحال کا متحمل نہیں ہوسکتا۔

پی ٹی آئی رہنما نے بتایا کہ خرم دستگیر نےکہا عمران خان رہ جاتے تو وہ 100 نئے ججز نیب میں لگا رہے تھے، اور کیا اعتراف کیا احتساب سے بچنے کیلئے عمران خان کو باہر نکالا، ہم نے اس حکومت کو سازش کرکے باہرنکالا۔

ان کا کہنا تھا کہ اس سے پہلے صدر اور وزیراعظم نے سپریم کورٹ کو خط لکھا تھا، سپریم کورٹ سے کہا تحقیقات کرائیں حکومت بدلنے کی وجوہات کیا تھیں۔

نیب قوانین میں تبدیلی کے حوالے سے فواد چوہدری نے کہا کہ یہ دوسرا این آراو ہے ، جو شریف اور زرداری فیملی ریاست سے لے رہی ہے، ہم پوچھ رہے تھے وجہ کیا ہے وجہ خرم دستگیر نے بتادی، انھوں نے پہلا این آراو مشرف سے لیا، دوسراریاست سے لے رہے ہیں، مشرف دور میں جتنے کیسز تھے، این آر او ون کے تحت معاف ہوگئے۔

تحریک انصاف کے رہنما کا کہنا تھا کہ آج پوری تحریک انصاف بلیک ڈے منارہی ہے، نیب قوانین میں ترامیم بدترین این آراوہے جس پر عملدرآمد ہوا ہے، نیب قوانین میں ترامیم سےخصوصاًشریف،زرداری فیملی کو فائدہ پہنچایا گیا۔

انھوں نے مزید کہا کہ آپ کسی فردواحد کیلئےقانون سازی نہیں کرسکتے، قانون سب کے لئے برابر ہونا چاہئے، زرداری کے اکاؤنٹ سے 5ہزار کروڑ نکلے تو انہوں نے بتانا ہے کہ وہ کیسے آئے لیکن اب یہ سیکشن ختم کردیا یہ نیب پرڈال دیا گیا وہی بتائیں گے کہ کیسے آیا۔

فوانین میں ترمیم کی تفصیلات بتاتے ہوئے فواد چوہدری کا کہنا تھا کہ بیرون ملک سے کوئی ثبوت کریٹ ہوا اس پر نیب کچھ نہیں کرسکے گا، سیکشن 21جی کو انہوں نے تبدیل کردیا ہے، اب زرداری یا شریف فیملی اپنے ناموں پر اثاثے نہیں رکھیں گے، یہ لوگ دوسروں کے ناموں پر رکھتے ہیں۔

رہنما پی ٹی آئی نے کہا کہ نیب قوانین کے سیکشن9 میں ترمیم کی گئی ہے، مریم نواز کا ایون فیلڈ کا کیس بھی ختم ہورہا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ سیکشن 14 کے تحت منی ٹریل دیناتھی یہ شرط ختم کردی گئی، سیکشن 14 کی شرط ختم کرکے نیب کی خود مختاری کو ختم کردیا گیا اور نیب کو منسٹری آف انٹیریئر کے ماتحت کر دیاگیا ہے۔

فواد چوہدری نے بتایا کہ سیکشن18 سی کو تبدیل کردیا گیا، اب نیب ایف آئی آرنہیں کرسکے گا اور 6ماہ میں انکوائری رپورٹ فائنل نہیں ہوتی توکیس ختم کردیا جائے گا، نیب کو ایف آئی اے کی طرح انٹیریئر منسٹری میں ڈال دیا گیا ہے۔

سابق وفاقی وزیر کا کہنا تھا کہ اس طرح 1200 میں سے 1100 ارب کے کیسز نیب سے نکل گئے، صدرمملکت نے اس پر دستخط کرنے سے منع کردیا ہے، یہ عجیب وغریب معاملہ چل رہا ہے، مدعی اورملزم بھی خود ہیں، انہوں نے خود کو این آر او ٹو دے دیا اب کھلی آزادی ہے جو کرنا ہے کریں۔

فواد چوہدری نے کہا عمران خان اورپی ٹی آئی کی جانب سےسپریم کورٹ سےرجوع کررہےہیں، ملزموں نے خود مدعی بن کر فیصلہ کرلیا اور آصف زرداری، بلاول زرداری، نوازشریف، شہبازشریف، ان کے اہلِ خانہ، مریم نواز، شاہد خاقان عباسی، سعد رفیق اور راجاپرویز اشرف سب نے این آر او ٹو لے لیا۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ صدر کے پاس اختیار ہے ایک بار مسترد کرکے واپس بھیج دیتاہے اور پارلیمنٹ سے پاس ہو جائے تو 10 دن میں اس پرعمل ہو جاتا ہے۔

پی ٹی آئی رہنما نے پی ٹی آئی کی جانب سے لاکھوں لوگوں کا شکریہ ادا کرتے ہوئے کہا کہ یہ صرف عمران خان اورپی ٹی آئی مظاہرہ کرسکتےہیں، صرف 36 گھنٹے میں لاکھوں لوگ باہر نکلے ہیں، عمران خان نے ہمیشہ پاکستان کی بات کی ہے، عمران خان پاکستان کو جوڑنے کی علامت ہیں۔

Comments

یہ بھی پڑھیں