The news is by your side.

Advertisement

روس کو دیوالیہ ہونے سے بچانے کیلیے پیوٹن کا اہم فیصلہ

روسی صدر ولادیمیر پیوٹن نے ملک کو دیوالیہ ہونے سے بچانے کیلیے بیرونی قرضے ملکی کرنسی روبل میں ادا کرنے کے احکامات جاری کیے ہیں۔

روس کے صدر ولادیمیر پیوٹن نے ایک حکمنامے پر دستخط کردیے ہیں جس کے مطابق بیرونی قرض دہندگان کو عارضی طور پر قرضوں کی ادائیگی غیر ملکی کرنسی کے بجائے روبل سے کی جاسکے گی۔

غیر ملکی میڈیا کے مطابق بظاہر اس اقدام کا مقصد قرضے واپس نہ کرسکنے یعنی نادہندہ ہونے سے بچنا ہے۔

حکمنامے میں کہا گیا ہے کہ روبل میں ادائیگی روس کے مرکزی بینک کی مقرر کردہ شرح کی بنیاد پر کی جائے گی یہ اقدام ان ممالک کے قرضوں کی واپسی کیلیے ہے جو بقول ماسکو، روس کے خلاف مخالفانہ سرگرمیوں میں ملوٹ ہیں۔

یہ اقدام ایسے وقت سامنے آیا ہے جب مغرب کی جانب سے سخت اقتصادی پابندیوں کے باعث روبل شدید گراوٹ کا شکار ہے۔

درجہ بندی کرنے والی ایجنسی موڈیز نے اتوار کے روز اعلان کیا کہ اس نے روسی حکومت کے طویل مدتی بانڈز کیلیے درجہ بندی ’سی اے‘ کردی ہے، جس کے معنی ’دیوالیہ یا دیوالیہ ہونے کے قریب‘ کے ہیں۔

واضح رہے کہ امریکا، برطانیہ سمیت کئی مغربی اور یورپی ممالک نے روس پر مختلف نوعیت کی فوجی، اقتصادی پابندیاں عائد کردی ہیں۔

روس نے بھی مغرب کی جانب سے عائد کی جانے والی پابندیوں کو اعلان جنگ کے مترادف قرار دیا ہے۔

مزید پڑھیں: ”روس پر مغربی پابندیاں اعلان جنگ کے مترادف ہیں“

روسی صدر ولادیمیر پیوٹن نے کہا کہ یہ جو پابندیاں لگائی جا رہی ہیں، یہ اعلان جنگ کے مترادف ہیں، یوں تو مغربی ممالک بہت مہذب اور انسانی حقوق کے چیمپئن بنتے ہیں لیکن لوہانسک اور ڈونئیسک میں یوکرینی فوج کے 8 برس تک مظالم پر مجرمانہ خاموشی اختیار کی۔

Comments

یہ بھی پڑھیں