تازہ ترین

اسرائیل کا ایران پر فضائی حملہ

امریکی میڈیا کی جانب سے یہ دعویٰ سامنے آرہا...

روس نے فلسطین کو اقوام متحدہ کی مکمل رکنیت دینے کی حمایت کردی

اقوام متحدہ سلامتی کونسل کا غزہ کی صورتحال کے...

بیوٹی پارلرز اور شادی ہالز پر فکس ٹیکس لگانے کا فیصلہ

پشاور: خیبرپختونخوا حکومت نے بیوٹی پارلرز اور شادی ہالز...

سگریٹ پر ٹیکس میں اضافے کی سفارش

ماہرین اور تمباکو مخالف کارکنوں نے معیشت کو مضبوط بنانے کے لئے تمباکو ٹیکس میں اضافے کی سفارش کی ہے۔

یہ سفارش ایک ایسے وقت میں سامنے آئی ہے جب زرمبادلہ کے ذخائر کم ہو رہے ہیں، افراط زر زیادہ ہے اور ادائیگیوں کے توازن کی صورتحال غیر یقینی ہے۔

سوسائٹی فار دی پروٹیکشن آف رائٹس آف چائلڈ (ایس پی اے آر سی)نے ایک بیان میں محمد اورنگزیب کی بطور وزیر خزانہ تقرری کا خیر مقدم کیا ہے اور ان پر زور دیا ہے کہ وہ تمباکو ٹیکس کو معیشت کو مضبوط بنانے کے لئے ایک ممکنہ ذریعہ کے طور پر غور کریں۔

ایس پی اے آر سی نے ایک بیان میں کہا کہ اس طرح کے اقدامات ممکنہ طور پر معاشی مشکلات کو کم کرنے کے دوہرے فوائد پیش کرسکتے ہیں جبکہ اس کے ساتھ ساتھ ملک کے صحت کے ایجنڈے کو آگے بڑھا سکتے ہیں۔

ایس پی اے آر سی نے صحت کے کارکنوں کے خدشات کا اظہار کیا جو یوٹیلیٹیز کے بجائے سگریٹ پر زیادہ ٹیکس کی وکالت کرتے ہیں۔ یہ اسٹریٹجک نقطہ نظر نہ صرف صحت عامہ کے اہداف سے مطابقت رکھتا ہے بلکہ تمباکو کے استعمال سے وابستہ وسیع تر معاشی مضمرات کو بھی حل کرتا ہے۔

مہم برائے تمباکو فری کڈز (سی ٹی ایف کے) کے کنٹری ہیڈ ملک عمران احمد نے وزیر خزانہ محمد اورنگزیب سے اپیل کی کہ وہ پاکستان میں تمباکو کے استعمال سے پیدا ہونے والے اہم چیلنج کو تسلیم کریں۔

انہوں نے کہا کہ تقریبا 31.9 ملین بالغ افراد تمباکو کا استعمال کرتے ہیں ، جو بالغ آبادی کا 19.7 فیصد ہے ، صحت عامہ اور معیشت پر اثرات کو نظر انداز نہیں کیا جاسکتا ہے۔احمد نے تمباکو نوشی سے پیدا ہونے والی غیر متعدی بیماریوں کے علاج کے لئے صحت کی دیکھ بھال کے وسائل پر ڈالے گئے بوجھ پر زور دیتے ہوئے معاشی دبا کو کم کرنے اور عوامی صحت کے تحفظ کے لئے تمباکو ٹیکس میں اضافے جیسے اقدامات کی فوری ضرورت پر زور دیا۔

دوسری جانب آئی بی سی کی ڈائریکٹر رابعہ سید کا کہنا تھا کہ سگریٹ پر ٹیکس میں 26 فیصد اضافے سے پاکستان 17 ارب روپے کا اضافی ریونیو حاصل کر سکتا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ "اس تجویز کا مقصد نہ صرف فوری مالی دبا کو دور کرنا ہے بلکہ ڈبلیو ایچ او کے بیان کردہ تمباکو کے استعمال کی حوصلہ شکنی کرکے صحت عامہ کے وسیع تر مقاصد کے ساتھ بھی مطابقت رکھتا ہے۔

ایس پی اے آر سی کے پروگرام منیجر ڈاکٹر خلیل احمد نے نوجوانوں میں تمباکو نوشی کی طرف راغب ہونے کے پیچھے سگریٹ کی سستی کو ایک محرک عنصر کے طور پر اجاگر کیا اور تمباکو نوشی سے متعلق بیماریوں اور اموات سے منسلک معاشی اخراجات پر مزید زور دیا۔

Comments

- Advertisement -