The news is by your side.

Advertisement

کرونا وائرس کی نئی اقسام کے بارے میں ایک اور انکشاف

واشنگٹن: حال ہی میں کی جانے والی ایک تحقیق سے علم ہوا کہ کرونا وائرس کی نئی قسموں میں ایسی میوٹیشنز موجود ہیں جو خود کو ویکسین سے پیدا ہونے والے مدافعتی ردعمل سے کسی حد تک بچنے میں مدد کرتی ہیں۔

بین الاقوامی ویب سائٹ کے مطابق امریکا میں ہونے والی ایک تحقیق کے مطابق کرونا وائرس کی تیزی سے پھیلنے والی اقسام میں ایسی میوٹیشنز موجود ہیں جو اس وائرس کو بیماری یا ویکسین سے پیدا ہونے والے مدافعتی ردعمل سے کسی حد تک بچنے میں مدد کرتی ہیں۔

امریکا کے اسکریپرز ریسرچ انسٹیٹوٹ کی اس تحقیق میں جرمنی اور نیدر لینڈز کے ماہرین نے بھی کام کیا تھا اور اس میں میوٹیشنز کے بارے میں اہم تفصیلات کا انکشاف کیا گیا۔

تحقیق میں اسٹرکچرل بائیولوجی تیکنیکوں کا استمال کر کے جانچ پڑتال کی گئی کہ وائرس ناکارہ بنانے والی اینٹی باڈیز کس طرح وائرس کی اوریجنل قسم اور نئی اقسام کے خلاف کام کرتی ہیں اور ان کے افعال برطانیہ، جنوبی افریقہ، بھارت اور برازیل میں دریافت اقسام کس حد تک متاثر ہوتے ہیں۔

کرونا کی تشویش کا باعث بننے والی اقسام میں برطانیہ میں دریافت ہونے والی قسم بی 117، جنوبی افریقہ میں دریافت قسم بی 1351، برازیل میں دریافت قسم پی 1 اور بھارت میں دریافت قسم بی 1617 شامل ہیں۔

یہ اقسام ووہان میں پھیلنے والی وائرس کی اوریجنل قسم کے مقابلے میں زیادہ متعدی قرار دی جاتی ہیں اور حالیہ تحقیقی رپورٹس میں دریافت کیا گیا کہ ان اقسام کے خلاف اوریجنل وائرس سے بیمار ہونے کے بعد یا ویکسی نیشن سے بننے والی اینٹی باڈیز کم مؤثر ہوتی ہیں۔

ایسا خیال کیا جارہا ہے کہ یہ نئی اقسام کچھ کیسز میں ویکسی نیشن کے باوجود لوگوں کو بیمار کرسکتی ہیں اور اسی لیے ماہرین نے جاننے کی کوشش کی کہ یہ اقسام کس طرح مدافعتی ردعمل سے بچنے کے قابل ہوتی ہیں۔

اس تحقیق کے لیے ماہرین نے کورونا وائرس کے اسپائیک پروٹین میں آنے والی 3 میوٹیشنز کے 417 این، ای 484 کے اور این 501 وائے پر توجہ مرکوز کی۔

اکٹھے یا الگ الگ یہ میوٹیشنز کرونا کی بیشتر نئی اقسام میں دریافت ہوئی ہیں اور یہ سب وائرس کے ریسیپٹر کو جکڑنے والے مقام پر ہیں۔

محققین نے اینٹی باڈیز کی جانچ پڑتال کی اور دریافت کیا کہ ان میں سے بیشتر اینٹی باڈیز کی وائرس کو جکڑنے اور اسے ناکارہ بنانے کی صلاحیت کافی حد تک کم ہوجاتی ہے۔

اسٹرکچرل امیجنگ ٹیکنیکس کو استعمال کر کے ماہرین نے وائرس کے مختلف حصوں کا نقشہ بناکر جانچ پڑتال کی کہ کس طرح میوٹیشنز ان مقامات پر اثر انداز ہوتی ہیں جن کو اینٹی باڈیز جکڑ کر وائرس کو ناکارہ بناتی ہیں۔

نتائج سے عندیہ ملتا ہے کہ وائرس کی اوریجنل قسم کے خلاف اینٹی باڈیز کا ردعمل بہت مؤثر ہوتا ہے مگر مخصوص اقسام اس سے بچنے کی اہلیت رکھتی ہیں، چنانچہ بتدریج ویکسینز کو اپ ڈیٹ کرنے کی ضرورت ہوگی۔

Comments

یہ بھی پڑھیں