تازہ ترین

سیکیورٹی فورسز کا بونیر میں آپریشن، دہشت گرد سلیم عرف ربانی مارا گیا

سیکیورٹی فورسز کی جانب سے بونیر میں انٹیلی جنس...

کوئٹہ: تفتان جانیوالی بس سے اغوا کیے گئے 9 مسافر قتل

کوئٹہ:نوشکی کے قریب تفتان جانیوالی بس سے اغوا کیے...

بہاولنگر واقعے کی مشترکہ تحقیقات ہوں گی، آئی ایس پی آر

آئی ایس پی آر نے کہا ہے کہ بہاولنگر...

عیدالفطر پر وفاقی حکومت نے عوام کو خوشخبری سنا دی

اسلام آباد: عیدالفطر کے موقع پر وفاقی حکومت نے...

ایشیائی بینک نے پاکستان میں مہنگائی میں کمی کی پیشگوئی کر دی

ایشیائی ترقیاتی بینک نے پاکستان میں آئندہ مالی سال...

روس یوکرین سے اہم معاہدے کی توسیع پر رضامند

روس نے خوراک کے عالمی بحران کو کم کرنے کے لیے یوکرین سے اناج کی برآمدات کے معاہدے میں 60 روز کی توسیع پر رضامندی ظاہر کردی ہے۔

غیر ملکی میڈیا کے مطابق روس نے یوکرین سے اناج کی برآمدات کے معاہدے میں 60 روزہ توسیع کرنے پر رضامندی ظاہر کر دی ہے۔ روس نے اصل معاہدے کی 120 دن کی مدت میں سے نصف کے لیے معاہدے کی توسیع پر اتفاق جنیوا میں کیا ہے۔

اس حوالے سے روس کا کہنا ہے کہ وہ نام نہاد بلیک سی گِرَین انیشیٹو میں توسیع کی مخالفت نہیں کرے گا جس کا مقصد خوراک کے عالمی بحران کو کم کرنا ہے۔

اقوام متحدہ کے وفد سے ملاقات کے بعد روسی ڈپٹی وزیر خارجہ کا کہنا تھا کہ ’بلیک سی انیشیٹو‘ کی مدت ختم ہونے کے بعد اس کی میعاد میں اضافے پر ہمیں کوئی اعتراض نہیں ہے۔ تاہم اس مرتبہ توسیع صرف 60 دن کیلیے ہوگی اور مستقبل کے لائحہ عمل کا انحصار زبانی کلامی کے بجائے ہماری زرعی درآمدات کے عملی نارملائزیشن پر منحصر ہوگا۔

اپنے بیان میں انہوں نے مزید کہا کہ مذاکرات سے ایک بار پھر تصدیق ہو گئی ہے کہ کیف کو منافع پہنچانے کیلیے یوکرینی اشیا کی درآمدات بہت تیزی سے کرانے کی کوششیں کی جاتی ہیں تاہم روسی زرعی درآمدات پر اب بھی پابندیاں عائد ہیں۔

واشنگٹن، برسلز اور لندن کی جانب سے روس پر فرٹیلائیزر اور غذائی اشیا کی درآمد پر پابندیوں کے استثنیٰ پر عمل درآمد نہیں کیا جا رہا۔

دوسری جانب یوکرین نے متنبہ کیا کہ یہ اصل معاہدے سے “متصادم” ہے، تاہم اس نے روس کی تجویز کو مسترد نہیں کیا۔

واضح رہے کہ اقوام متحدہ اور ترکی کی ثالثی میں گزشتہ سال جولائی میں یوکرین سے اناج برآمدات جاری رکھنے کے معاہدے کی مدت رواں سال 18 مارچ کو ختم ہو جائے گی، معاہدے کے تحت اب تک 2 کروڑ 40 لاکھ ٹن سے زیادہ اناج بر آمد ہوا۔

Comments

- Advertisement -