نیب نے خواجہ سعد رفیق اور سلمان رفیق کو حراست میں لے لیا -
The news is by your side.

Advertisement

نیب نے خواجہ سعد رفیق اور سلمان رفیق کو حراست میں لے لیا

خواجہ برادران کو پیراگون ہاؤسنگ اسکینڈل میں گرفتار کیا گیا ہے

لاہور: صوبہ پنجاب کی لاہور ہائیکورٹ نے مسلم لیگ ن کے رہنماؤں خواجہ سعد رفیق اور ان کے بھائی سلمان رفیق کی عبوری ضمانت کی درخواست خارج کردی جس کے بعد قومی احتساب بیورو (نیب) نے دونوں بھائیوں کو حراست میں لے لیا۔

تفصیلات کے مطابق لاہور ہائیکورٹ میں مسلم لیگ ن کے رہنما اور سابق وزیر ریلوے خواجہ سعد رفیق اور ان کے بھائی سلمان رفیق کے خلاف کیس کی سماعت ہوئی۔ سماعت میں نیب پراسیکیوٹر نے عدالت کو بتایا کہ تفتیش تبدیلی کے معاملے پر چیئرمین نیب نے درخواست پر فیصلہ کردیا ہے۔

خواجہ برادران کو پیراگون ہاؤسنگ اسکینڈل میں گرفتار کیا گیا ہے

پراسیکیوٹر نے کہا کہ چیئرمین نیب نے تفتیش تبدیلی کی درخواست منظور نہیں کی، چیئرمین نیب کی اجازت کے بغیر ڈی جی نیب کو تفتیش سے روک دیا گیا۔

خواجہ سعد رفیق کے وکیل نے کہا کہ ہمیں علم نہیں قیصر امین نے سعد رفیق کے خلاف کیا بیان دیا، مجسٹریٹ سے قیصرا مین کا بیان ریکارڈ کروایا پھر دوسرے جج کے روبرو کروایا۔

وکیل نے کہا کہ قیصر امین پر تشدد کیا گیا اور نشہ آور ادویات کے زیر اثر بیان لیا گیا۔ نہیں بتایا گیا خواجہ برادران کو کن الزامات پر گرفتار کرنا چاہتے ہیں۔

جج نے استفسار کیا کہ آپ یہ بتائیں کہ چاہتے کیا ہیں جس پر وکیل نے کہا کہ تفتیش سے متعلق چیئرمین نیب کے حکم کا مراسلہ دیا جائے، ڈی جی نیب مسلسل ن لیگ کے خلاف بیانات دے رہے ہیں ان پر اعتماد نہیں۔

وکیل نے کہا کہ چیئرمین نیب کا فیصلہ اور 3 روز کا وقت دیا جائے تاکہ جواب دیں، ڈی جی نیب کے خلاف ہم نے ثبوت دیے ان کے پاس نہ بھیجا جائے۔

بعد ازاں عدالت نے دونوں بھائیوں کی عبوری ضمانت کی درخواست خارج کردی جس کے بعد نیب نے دونوں کو حراست میں لے لیا۔

یاد رہے کہ آشیانہ ہاؤسنگ سوسائٹی کی تحقیقات میں انکشاف ہوا تھا کہ وفاقی وزیر ریلوے خواجہ سعد رفیق کے پیراگون سوسائٹی سے براہ راست روابط ہیں، پنجاب لینڈ ڈویلپمنٹ کمپنی کے ذریعے آشیانہ اسکیم لانچ کی گئی تھی۔

بعد ازاں خواجہ برادران سے قومی احتساب بیورو (نیب) کے افسران نے ایک گھنٹہ تک پوچھ گچھ کی تھی۔ نیب کی 3 رکنی تحقیقاتی ٹیم نے خواجہ سعد رفیق اور سلمان رفیق سے الگ الگ تحقیقات کی جس دوران وہ افسران کو مطمئن نہیں کرسکے تھے۔

خواجہ سعد رفیق اور ان کے بھائی نے ممکنہ گرفتاری سے بچنے کے لیے لاہور ہائیکورٹ میں درخواست بھی دائر کی تھی۔ خواجہ برادران پیراگون ہاؤسنگ اسکینڈل سمیت 3 مقدمات میں مطلوب تھے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں