The news is by your side.

Advertisement

سعودی عرب : شیشہ اور حقے پر پابندی کے حوالے سے اہم وضاحت

ریاض : سعودی حکومت نے مملکت میں رہنے والے تمام ملکی اور غیر ملکیوں کو ایک بار پھر متنبہ کیا ہے کہ شیشہ اور ہر طرح کے حقے پر پابندی پر سختی سے عمل درآمد کیا جائے۔

تفصیلات کے مطابق سعودی وزارت بلدیات و دیہی امور نے اعلان کیا ہے کہ سعودی عرب میں شیشہ اور ہر طرح کے حقے پر پابندی برقرار ہے اسے ختم نہیں کیا گیا۔

وزارت کے اعلامیے کے مطابق کورونا وائرس سے سعودی شہریوں اور مقیم غیرملکیوں کی صحت و سلامتی کی خاطر ریستورانوں اور تجارتی مراکز میں پلے لینڈز پر بھی پابندی برقرار ہے۔

العربیہ نیٹ کے مطابق وزارت بلدیات سے دریافت کیا گیا تھا کہ اب جبکہ وزارت داخلہ اتوار 21 جون سے مملکت کے تمام علاقوں اور شہریوں میں کرفیو مکمل طور پر ختم کرچکی ہے اور سرکاری و نجی دفاتر کے دروازے ملازمین کے لیے کھول دیے گئے ہیں اور مختلف قسم کی اقتصادی و تجارتی سرگرمیاں بحال ہوچکی ہیں- آیا ریستورانوں میں پلے لینڈز اور قہوہ خانوں میں شیشے پر پابندی بھی ختم ہوگئی ہے یا نہیں۔

وزارت بلدیات نے باقاعدہ بیان جاری کرکے تاکید کی کہ ابھی تک پلے لینڈ اور شیشے پر پابندی برقرار ہے۔ وزارت بلدیات کا کہنا ہے کہ دراصل شیشے پر پابندی کا سلسلہ اس لیے برقرار رکھا گیا ہے کیونکہ صحت حکام اس حوالے سے مطمئن نہیں ہیں۔

ان کا کہناہے کہ حقہ نوشی سے وائرس پھیلنے کا امکان بہت زیادہ ہے۔ حقہ نوش اس حوالے سے احتیاط نہیں برت سکتے جب کہ پلے لینڈز کھولنے کی صورت میں بچوں کو قابو کرنا مشکل ہوگا۔

انہیں پتہ بھی نہیں ہوتا کہ وہ وائرس میں مبتلا ہوگئے ہیں یا نہیں۔بچوں میں برداشت کی صلاحیت زیادہ ہونے کی وجہ سے بھی پتہ نہیں چلتا جبکہ وہ کھیل کے چکر میں انجانے میں اپنی تکلیف چھپا سکتے ہیں۔ ان تمام خدشات کے پیش نظر پلے لینڈ اور شیشے پر پابندی برقرار ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں