چنگچی رکشوں کی اجازت سے متعلق کیس، سندھ حکومت کی رپورٹ مسترد، جرمانہ عائد
The news is by your side.

Advertisement

چنگچی رکشوں کی اجازت سے متعلق کیس، سندھ حکومت کی رپورٹ مسترد، جرمانہ عائد

کراچی : سپریم کورٹ نے چنگچی رکشوں کی اجازت سےمتعلق کیس میں سندھ حکومت کی رپورٹ مسترد کردی، جسٹس گلزاراحمد نے ریمارکس دیئے کہ کراچی میں ٹرین چلی اورنہ ہی بسیں، دو سو نئی بسیں زمین کھا گئی یا سمندر نگل گیا۔

تفصیلات کے مطابق کراچی سپریم کورٹ رجسٹری میں چنگ چی رکشے چلانے کی اجازت سےمتعلق کیس کی سماعت جسٹس گلزاراحمد کی سربراہی میں 3 رکنی بینچ نے کی۔

سماعت کی سپریم کورٹ نے حکومت سندھ کی رپورٹ مسترد کرتے ہوئے عدالتی فیصلے پرعملدرآمد نہ کرنے پر سندھ حکومت پر 30 ہزار روپے جرمانہ بھی عائد کردیا۔

جسٹس گلزاراحمد نے ریمارکس دیئے صوبائی حکومت حکم عدولی کر رہی ہے، حکومت نے کراچی میں ٹرانسپورٹ کی سہولت کیلئے کچھ نہیں کیا، کراچی میں1955ماڈل گاڑیاں چل رہی ہیں، 200 نئی بسیں زمین کھا گئی یا سمندر نگل گیا۔

کراچی میں1955ماڈل گاڑیاں چل رہی ہیں، 200 نئی بسیں زمین کھا گئی یا سمندر نگل گیا۔جسٹس گلزاراحمد

سپریم کورٹ نے چنگ چی رکشوں کی انسپیکشن نہ کرنے پر برہمی کااظہار کرتے ہوئے آئندہ سماعت پر سیکرٹری ٹرانسپورٹ، ڈی آئی جی ٹریفک اور سیکرٹری ایکسائز اینڈ ٹیکسیشن سندھ کو طب کرلیا اور تینوں افسران کو عدالتی فیصلے پرعملدرآمد کی رپورٹس پیش کرنے کی ہدایت کی۔

سپریم کورٹ میں کیس کی مزید سماعت 2 ہفتے کے لئے ملتوی کردی۔

یاد رہے رواں سال مارچ میں سپریم کورٹ نے ملک بھر میں چنگ چی رکشوں کو چلنے کی مشروط اجازت دیتے ہوئے چنگ چی رکشہ ڈرائیور کیلئے لائسنس لازم قرار دیا تھا۔

سپریم کورٹ کے فیصلے میں چنگ چی رکشوں کیلئے مجاز حکام کا فٹنس سرٹیفکیٹ لازم قرار دینے کے ساتھ صرف منظور شدہ کمپنیوں اور ڈیزائن کے رکشوں کو چلنے کی اجازت دی گئی تھی۔

فیصلے میں کہا گیا تھا کہ چنگچی رکشہ کی تیاری میں مسافروں اور ڈرائیورکی حفاظت یقینی بنائی جائے جب کہ عمل نہ کروانے والے اہلکاروں کے خلاف محکمانہ اور فوجداری کارروائی کرنے کا حکم دیا تھا۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں