The news is by your side.

Advertisement

برطانیہ میں بچے کا مقناطیس کا خوف ناک تجربہ

مانچسٹر: برطانیہ میں ایک بچے نے مقناطیس کا خوف ناک تجربہ کر کے اپنی جان خطرے میں ڈال دی۔

برطانوی میڈیا کے مطابق مقناطیس کھا کر چیزیں اپنے جسم سے چپکانے کی خواہش نے بچے کی جان خطرے میں ڈال دی، تاہم ڈاکٹروں نے بروقت اس کی جان بچا لی۔

رپورٹ کے مطابق مانچسٹر سے تعلق رکھنے والے 12 سالہ لڑکے رائلی نے تجربے کے لیے مقناطیس نگلے تھے تاکہ معلوم ہو سکے کہ دھات کی چیزیں اس کے پیٹ پر چپکتی ہیں یا نہیں۔

سائنسی تجربات میں دل چسپی رکھنے والے بچے نے تجربے کے لیے 54 مقناطیس نگل لیے تھے، جس کے باعث اس کی جان خطرے میں پڑ گئی تاہم ڈاکٹروں نے کامیاب آپریشن کے بعد اس کی جان بچا لی۔

معاملے کا پتا اس وقت چلا جب مقناطیس کھانے کے بعد 4 دن گزرنے پر بھی دھات کی چیزیں جسم سے نہ چپکیں تو لڑکے نے اپنی والدہ کو بتا دیا کہ اس نے غلطی سے مقناطیس نگل لیے ہیں۔

لڑکے کی ماں یہ سن کر گھبرا گئیں اور اسے اسپتال لے گئی جہاں ڈاکٹروں نےاس کے ایکسرے کیے اور پیٹ اور آنتوں میں مقناطیس کے 54 طاقت ور کھلونے دیکھ کر دنگ رہ گئے۔

خاتون نے بتایا کہ ڈاکٹروں نے ایکس رے دیکھنے کے بعد اندازہ لگایا تھا کہ میرے بیٹے کے پیٹ میں 24 سے 30 مقناطیس موجود ہیں تاہم آپریشن کرنے پر اس کی اصل تعداد معلوم ہوئی۔

خاتون نے کہا مجھے اب تک یہ سمجھ نہیں آ رہی کہ میرے بیٹے نے کب اور کیسے اتنے زیادہ مقناطیس نگلے۔ لڑکے رائلی نے بھی اعتراف کیا کہ میں یہ دیکھنا چاہتا تھا کہ آیا تانبا میرے پیٹ پر چپکتا ہے یا نہیں؟

Comments

یہ بھی پڑھیں