The news is by your side.

Advertisement

حکومت سندھ عدالتوں کے ساتھ گیم کھیلنا بند کردے، سندھ ہائیکورٹ

کراچی : سندھ ہائی کورٹ نے حکومت سندھ کو تنبیہ کی ہے کہ وہ عدالتوں کے ساتھ گیم کھیلنا بند کرے، انکوائری نیب کا کام ہے،اسے کوئی نہیں روک سکتا۔ جبکہ عدالت نے محکمہ آبپاشی سندھ کے تین اعلیٰ افسران کو عہدے سے ہٹانے کا حکم دے دیا۔

تفصیلات کے مطابق سندھ ہائیکورٹ میں محکمہ آبپاشی میں7ارب روپے سے زائد کرپشن کیس کی سماعت ہوئی، سماعت میں اسپیشل سیکریٹری آبپاشی جنید میمن،چیف انجینئرارشاد میمن کو ہٹانے کا حکم دیا جبکہ سپرنٹنڈنٹ انجینئر فیاض کو بھی ہٹانے کا حکم دیا۔

نیب پراسیکیوٹر نے کہا کہ تینوں افسران کیخلاف3،3انکوائریزچل رہی ہیں، افسران انکوائریوں پراثراندازہورہےہیں، عدالتی حکم کےباوجودان کوعہدوں سے نہیں ہٹایا گیا۔

جس پر عدالت نے حکم دیا کہ کرپشن میں ملوث افسران کوعہدوں سےہٹایاجائے، افسران کےعہدوں پر رہنے سے شفاف انکوائری کی توقع نہیں۔

عدالت نے استفسار کیا کہ کے پی ماہرین کی ٹیم کے اخراجات کس نے برداشت کئے، جس پر سرکاری وکیل نے بتایا کہ ٹیم کے اخراجات محکمہ آبپاشی نے برداشت کئے۔

چیف جسٹس سندھ ہائیکورٹ نے حیرت کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ تحقیقات بھی آپکے خلاف،مہمان نوازی بھی آپ نے کی اور وضاحت کےلئےڈی جی نیب27 فروری کوسندھ ہائیکورٹ طلب کرلیا۔

چیف جسٹس احمد علی شیخ نے ریمارکس دیے کہ سندھ حکومت نہروں کے سروے کیلئے تاریخیں دیکرمؤقف تبدیل کرچکی، یہ چاہتےہیں اربوں کی کرپشن کرنیوالوں کیخلاف کارروائی نہ ہو، جس پر اےجی سندھ کا کہنا تھا کہ ہم بالکل ایسانہیں چاہتے،آبادگاروں نے بھی درخواست کی ہے۔

عدالت نے کہا کہ ہم آبادگاروں کےمسائل جانتےہیں وہ کیسےدرخواست دائرکرسکتے ہیں، جس پر پراسیکیو نیب نے کہا کہ اصل ذمہ داران کو ہٹانے کے بجائے دیگر افسران کو ہٹا دیا گیا۔

جسٹس کے کے آغا نے حکومت سندھ کو تنبیہ کی کہ عدالتوں کےساتھ گیم کھیلنابندکردے جبکہ چیف جسٹس احمد علی شیخ نے ریمارکس دیئے کہ انکوائری نیب کاکام ہے،اسےکوئی نہیں روک سکتا۔

عدالت نے نیب کوروہڑی کینال،جھمڑاوکینال،نارہ کینال کے سروےکی اجازت دیتے ہوئے ریمارکس دیئے کہ نیب ماہرین کیساتھ جاکرنہروں پر ترقیاتی منصوبوں کا معائنہ کریں۔

نیب پراسیکیوٹر نے بتایا کہ 14-2013 میں روہڑی کینال میں بندوں کی تعمیرات کیلئے رقم جاری کی گئی، ملزموں نےروہڑی کینال کی تعمیرات کے بجائے رقم ہڑپ کرلی، کرپشن میں پراجیکٹ ڈائریکٹراشفاق نورمیمن،ولی محمدسمیت دیگر شامل ہیں۔


خبر کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں‘ مذکورہ معلومات  کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہچانے کےلیے سوشل میڈیا پرشیئر کریں۔

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں