The news is by your side.

Advertisement

شہباز شریف کو کیسے چیئرمین پی اے سی بنایا گیا، عدالت جانے کا سوچ رہا ہوں: شیخ رشید

لاہور: وفاقی وزیر ریلوے شیخ رشید کا کہنا ہے کہ پبلک اکاؤنٹس کمیٹی کے چیئرمین کے خلاف سپریم کورٹ جانے کا سوچ رہا ہوں۔ شہباز شریف کو کیسے چیئرمین پی اے سی بنایا گیا۔

تفصیلات کے مطابق وفاقی وزیر ریلوے شیخ رشید نے نیوز کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ آج ریلوے کی تاریخ کا بہت بڑا دن ہے، ریلوے کے مزدور چیف جسٹس ثاقب نثار کے مشکور ہیں۔ چیف جسٹس نے وہ کام کیا جو دس سال سے اٹکا ہوا تھا۔

شیخ رشید کا کہنا تھا کہ ریلوے کے اربوں روپے کے 123 کیسز ہیں، لاکھوں ایکڑ زمین پر قبضہ کرنے والے سمجھتے تھے کچھ نہیں ہوگا۔ ریلوے افسران میرٹ پر 3 سال کی رکی لیزوں پر کام شروع کریں۔ تین سال سے زائد میرٹ پر لیز کی اجازت ہے۔

انہوں نے کہا کہ 23 مارچ سے پہلے 2 ٹرینیں شروع کر رہے ہیں، رحمٰن بابا ایکسپریس بہت کامیاب ہوئی ہے۔ ایم ایل ون آخری مرحلے میں ہے۔ 2 اے سی اور 2 اکانومی ٹرینیں چلائیں گے، کراچی سے پشاور تک نیا ٹریک لگایا جائے گا۔

وزیر ریلوے کا کہنا تھا کہ 7 رکنی کمیٹی کو سرمایہ کاری اور دیگر امور کا اختیار دیا ہے، ریلوے کی زمین پر کوئی ہاؤسنگ اسکیم نہیں بنائی جاسکے گی۔ جو ٹریک اکھاڑیں گے اسے دوسری جگہ بچھائیں گے۔

انہوں نے کہا کہ شالیمار ٹرین اور شالیمار اسپتال کیس نیب کو بھیجے ہیں، پنڈی کی بیکری کا کیس دینا چاہتا ہوں اربوں روپے کا کیس ہے۔ پی اے سی چیئرمین کے خلاف سپریم کورٹ جانے کا سوچ رہا ہوں۔ شہباز شریف کو کیسے چیئرمین پی اے سی بنایا گیا۔

شیخ رشید نے کہا کہ کارگو کی کامیابی کے بعد مزید گاڑیاں نجی شعبے کے اشتراک سے چلائیں گے، خسارہ مسافر ٹرینوں سے نہیں زیادہ مال گاڑیاں چلانے سے کم ہوگا۔ تاجر کارگو ٹرین کی معلومات ٹریکنگ سسٹم سے حاصل کر سکیں گے۔ پاک فوج کی 50 بوگیاں کھڑی ہیں، باجوہ صاحب سے چلانے کی اجازت لوں گا۔

انہوں نے کہا کہ زرداری صاحب خود کہتے ہیں جیل میرا سسرال ہے، مجھے کہنے کی کیا ضرورت ہے، معاشی غداروں کو سزا دلانے میں عمران خان کی قیادت میں کامیاب ہوجائیں گے۔

وفاقی وزیر کا کہنا تھا کہ کرپشن کی ہے تو نواز شریف کو 7 سال ہوئی مجھے 14 سال کی سزا دے دیں، نواز شریف اور زرداری خاندان کا سیاست میں مستقبل نہیں دیکھ رہا۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں