The news is by your side.

Advertisement

اسٹیٹ بینک نے بینکوں میں نقد کے انتظام کو جدید بنانے کے لیے ہدایات جاری کردیں

کراچی : بینک دولت پاکستان نے بینکوں میں نقد رقوم کے انتظام کو جدید خطوط پر استوار کرنے کے لیے جامع ہدایات جاری کر دی ہیں، یہ ہدایات نقد رقوم کے انتظام کو دستی  کے بجائے خود کار بنانے اور زیر گردش بینک نوٹوں کے معیار میں بہتری لانے کی حکمت عملی کا حصہ ہیں۔

اس ضمن میں 26 اگست 2015ء کو جاری کردہ سرکلر نمبر ایف ڈی  03/2015کے مطابق 2 جنوری 2017ء سے تمام بینک اپنی شاخوں، اے ٹی ایمز سے اپنے صارفین، عوام کو صرف مشین سے توثیق شدہ اور چھانٹی گئی نقد رقوم دیں گے۔ اس مقصد کے لیے بینک خصوصی ’کیش پروسیسنگ سینٹرز ‘قائم کریں گے جن میں نقد رقوم کی پروسیسنگ اور ذخیرہ کاری کی جدید ترین سہولتوں سے مزین مشینیں موجود ہوں گی۔ اس کے بجائے بینک یہ بھی کرسکتے ہیں کہ اپنی نقدمہیا کرنے والی شاخوں پر نقد کی پروسیسنگ کی مطلوبہ سہولتیں فراہم کریں یا دیگر بینکوں/کیش پروسیسنگ سینٹرز سے مل کر اپنی نقد رقوم کی پروسیسنگ کا بندوبست کریں۔

اس کے علاوہ اسٹیٹ بینک نے بین البینک مبادلے / نقد لین دین کا طریقہ کار بھی متعارف کرایا ہے جس کے تحت 2 جنوری 2017ء سے تمام بینک دوسرے بینکوں سے براہِ راست نقد لے سکیں گے، اور ایس بی پی بینکنگ سروسز کارپوریشن (ایس بی پی، بی ایس سی) ونڈو کو صرف آخری چارۂ کار کے طور پر استعمال کیا جائے گا یعنی جب نقد کی قلّت ہو تو یہ ونڈو بینکوں کو نقد فراہم کرے گی، اور جب مارکیٹ میں اضافی نقد رقوم موجود ہوں گی تو انجذاب کیا جا سکے گا۔  2 جنوری 2017ء سے یہ طریقۂ کار رائج ہونے سے موجودہ طریقہ ختم ہو جائے گا جس کے تحت بینک دوبارہ اجرا کے قابل  بینک نوٹ ایس بی پی بی ایس سی کے دفاتر میں جمع کراتے ہیں۔

ایس بی پی بی ایس سی کے دفاتر اضافی رقم آخری چارۂ کار کے طور پر صرف اس وقت قبول کریں گے جب یہ رقم بین البینک مارکیٹ میں استعمال نہ ہو سکے گی اور اس پر بھی مجموعی مالیت کا  0.12 فیصد سروس چارجز وصول کیا جائے گا۔ تاہم ایس بی پی بی ایس سی کے دفاتر بینکوں سے خراب/ ناکارہ بینک نوٹ بدستور وصول کرتے رہیں گے۔ موجودہ انتظام سے نئے انتظام پر آنے کا عمل ترتیب وار کیا جائے گا۔

توقع ہے کہ ان ہدایات پر موثر عمل درآمد سے ملک میں نقد رقوم کے انتظام میں تبدیلی اور جدت پیدا ہو گی، کارگزاری اور شفافیت آئے گی، نوٹوں کی جعلسازی کو روکا جا سکے گا اور زیرِ گردش کرنسی نوٹوں کے معیار میں نمایاں بہتری آئے گی۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں