The news is by your side.

کرونا وبا کے بعد ہمارے طلبہ کا چین واپس جانے کا مطالبہ پورا ہو رہا ہے: سفارتی حکام

اسلام آباد: سفارتی حکام نے کہا ہے کہ پاکستان اور چین کے درمیان سب سے بڑا پل چین میں زیر تعلیم پاکستانی طلبہ ہیں، کرونا وبا کے بعد ہمارے ان طلبہ کا واپس جانے کا مطالبہ پورا ہو رہا ہے۔

تفصیلات کے مطابق وزیر اعظم شہباز شریف کے دورہ چین کے حوالے سے اعلیٰ سفارتی حکام نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ’ہماری کوشش ہے کہ ہمارے طلبہ کی تعداد چین میں سب سے زیادہ غیر ملکی طلبہ کے طور پر بحال ہو جائے۔‘

سفارتی حکام کا کہنا تھا کہ پاکستان اور چین کی شراکت داری اسٹریٹیجک نوعیت کی شراکت داری ہے، وزیر اعظم کے دورے کے دوران کوئی بڑا معاہدہ نہیں ہوگا، لیکن ہماری باہمی انڈرسٹینڈنگ ہوگی، اس وقت چین اپنے اگلے 5 سالہ منصوبے کو حتمی شکل دے رہا ہے۔

حکام نے بتایا کہ وزیر اعظم کو دورے کی دعوت چینی صدر شی جی پنگ کی طرف سے ثمر قند میں ہونے والی ملاقات میں دی گئی تھی، مارچ 2020 کے بعد یہ پاکستان کا پہلا اعلیٰ سطح کا دورہ ہے، اور چین کی کمیونسٹ پارٹی کانگریس کے بعد یہ کسی سربراہ کا پہلا دورہ چین ہے۔

وزیراعظم شہباز شریف کے دورے سے قبل چین کا اہم فیصلہ

سفارتی ذرائع کے مطابق وزیر خارجہ بلاول بھٹو وزیر اعظم کی تمام ملاقاتوں میں متوقع طور پر موجود ہوں گے۔

ذرائع نے بتایا کہ پاکستان چین کی طرف سے گلوبل ڈویلپمنٹ انیشی ایٹوز پر بھی بات کرے گا، یو این میں تعاون اور اقوام متحدہ سیکیورٹی کونسل کی اصلاحات پر بھی بات کی جائے گی، پاکستان سیکیورٹی کونسل میں مستقل ممبران کے اصول کے خلاف ہے، ہم یو ایف سی یعنی یونائیٹیڈ فار چینج گروپ کے رکن ہیں، اور چین ہمارے ساتھ ہے۔

سفارتی حکام کے مطابق وزیر اعظم شہباز شریف کے دورے میں سی پیک منصوبوں پر پیش رفت کا جائزہ لے کر انھیں آگے بڑھایا جائے گا۔

Comments

یہ بھی پڑھیں