The news is by your side.

Advertisement

حکومت تحلیل، سوڈانی وزیر اعظم گرفتار

خرطوم: شمالی افریقی ملک سوڈان میں فوجی بغاوت کے بعد وزیر اعظم عبداللہ ہمدوک کو گھر میں نظر بند کر دیا گیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق سوڈان کی وزارت اطلاعات کا کہنا ہے کہ فوج نے وزیر اعظم عبداللہ ہمدوک کو بغاوت کی حمایت سے انکار کرنے پر نامعلوم مقام پر منتقل کرنے کے بعد انھیں گھر میں نظر بند کر دیا ہے۔

الجزیرہ کی رپورٹ کے مطابق وزارت اطلاعات نے کہا کہ سوڈانی فوج نے عبوری حکومت کو تحلیل کر کے وزیر اعظم عبداللہ ہمدوک اور ملک کی سویلین قیادت کے کئی دیگر ارکان کو گرفتار کر لیا ہے۔

عبد الفتاح البرہان، ایک جنرل جس نے اقتدار کی شریک حکمران تنظیم سوورین کونسل کی سربراہی بھی کی، نے ملک بھر میں ہنگامی حالت کا اعلان کر دیا اور کونسل اور عبوری حکومت کو تحلیل کر دیا، جس کے بعد ملک میں فوجی بغاوت کے خلاف مظاہرے شروع ہو گئے ہیں۔

پچھلے مہینے ناکام فوجی بغاوت کی سازش کے بعد سے سوڈان ایک نازک موڑ پر ہے، جب کہ ملک کے طویل عرصے تک رہنے والے رہنما عمر البشیر کی حکومت کا تختہ الٹنے کے بعد فوجی اور سویلین گروہوں کے درمیان تلخ الزامات کا آغاز ہوا ہے۔

سوڈان کے دارالحکومت خرطوم میں انٹرنیٹ سروس منقطع ہے، وزارت اطلاعات کے بارے میں کہا جا رہا ہے کہ وہ تاحال ہمدوک کے حامیوں کے قبضے میں ہے۔ الجزیرہ رپورٹ کے مطابق صنعتی وزیر کو بھی حراست میں لیا جا چکا ہے کیوں کہ انھوں نے حراست سے چند لمحے قبل ہی ٹویٹ کی تھی کہ فوجی ان کے گھر کے باہر موجود ہیں۔

سوڈانی جمہوریت حامی گروپ کا کہنا ہے کہ عوام فوجی بغاوت کے خلاف سڑکوں پر نکلیں۔

Comments

یہ بھی پڑھیں