The news is by your side.

Advertisement

یہ علامات دیکھ لیں تو سمجھ جائیں کہ قوت مدافعت کمزور ہو رہی ہے

امیونٹی سسٹم یعنی انسانی قوت مدافعت ہمارے جسم کو نہ صرف مختلف بیماریوں بلکہ ماحولیاتی قوتوں کے حملوں سے بھی محفوظ رکھتی ہے، اس لیے اسے سمجھنے کی بہت اہمیت ہے۔

اگر آپ یہ علامات دیکھ لیں تو سمجھ جائیں کہ قوت مدافعت کمزور ہو رہی ہے، اور آپ کو احتیاطی تدابیر اختیار کرنی چاہیئں، کیوں کہ جب مدافعتی نظام کمزور ہوتا ہے تو یہ جسم کو خطرناک بیماریوں سے بچانے کے لیے مؤثر انداز میں کام نہیں کر پاتا۔

1. بار بار نزلہ

اگر آپ کو بار بار نزلہ ہو رہا ہے یا نزلے کی علامات دوبارہ آ رہی ہیں، تو سمجھ لیں کہ آپ کا مدافعتی نظام کمزور ہے، لیکن یہ یاد رکھیں کہ سردی اور اس سے پیدا ہونے والا انفیکشن اکثر سات سے 10 دن میں ٹھیک ہو جاتا ہے۔

2. مستقل تھکاوٹ

سخت محنت کے بعد تھکاوٹ محسوس ہونا فطری ہے، لیکن اگر کافی آرام ملنے کے بعد بھی تھکاوٹ برقرار رہتی ہے تو یہ مدافعتی نظام کی کمزوری کی علامت ہو سکتی ہے، وجہ یہ ہے کہ جب جسم کا دفاعی نظام مؤثر انداز میں کام نہیں کر رہا ہوتا تو یہ تیزی سے تھکاوٹ محسوس کرتا ہے۔

3. جِلدی بیماریاں اور زخموں کا نہ بھرنا

اگر آپ نے محسوس کیا کہ جلد پر آپ کے زخم ٹھیک ہونے میں معمول سے زیادہ وقت لے رہے ہیں تو آپ کا مدافعتی نظام کمزور ہے، مدافعتی نظام جلد کو شفا بخش اور مؤثر بیکٹیریا یا جراثیم سے لڑنے میں مدد کرتا ہے، اور انفیکشن کا خطرہ کم کرتا ہے۔

مدافعتی نظام کے کمزور ہونے سے جلد کے معمول کے کام میں رکاوٹ پیدا ہوتی ہے، جس کی وجہ سے جلد کے انفیکشن سے لڑنے کی قوت کمزور ہو جاتی ہے۔

آپ کی جلد جراثیم سے لڑنے میں سب سے پہلی رکاوٹ ہے، جِلد پر بار بار خارش ہونا یا خشک جلد سوزش کی علامت ہے اور ہو سکتا ہے کہ آپ کا مدافعتی نظام بھی کمزور ہو۔

4. خون کی خرابی

خون کی کچھ بیماریاں کمزور مدافعتی نظام کی نشان دہی کرتی ہیں جن میں ہیموفیلیا، انیمیا، خون کا جمنا اور خون کا کینسر (جیسا کہ لیمفوما، لیوکیمیا، اور مائیلوما) شامل ہیں۔

5. اعضا کی سوزش

اعضا کی سوزش جسم کی قوت مدافعت کو بھی سُست کر سکتی ہے، جس کی وجہ خلیوں کا انفیکشن، بیکٹیریا، ٹروما یا گرمی ہو سکتی ہے، جسم میں کسی قسم کی چوٹ سوزش کا باعث بن سکتی ہے اور یہ کمزور مدافعتی نظام کی علامت ہے۔

6. اس کے علاوہ آٹو امیون امراض ہیں، مدافعتی نظام کی یہ بیماریاں مدافعتی نظام کی سرگرمی کو متاثر کرنے کا سبب بن سکتی ہیں، اگر یہ نظام ضرورت سے زیادہ متحرک ہو تو جسم اپنے ٹشوز کو نقصان پہنچانا شروع کر دیتا ہے، جس سے آٹو امیون بیماریاں جنم لیتی ہیں۔

اسی طرح کمزور مدافعتی نظام بچوں کی کمزور نشوونما کا باعث بنتا ہے، لہٰذا اگر آپ نے محسوس کیا کہ آپ کا بچے کا جسم معمول کے مطابق نہیں بڑھ رہا ہے تو آپ کو ڈاکٹر سے بچے کا معائنہ کروانے کی ضرورت ہے، یاد رہے کہ بعض اوقات نشوونما میں تاخیر ناقص خوراک کی وجہ سے بھی ہوتی ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں