The news is by your side.

کرکٹ گراؤنڈز کی نیلامی سے متعلق عدالت کا بڑا فیصلہ

اسلام آباد ہائیکورٹ نے وفاقی دارالحکومت کے کرکٹ گراؤنڈز کی نیلامی پر بڑا حکم دیتے ہوئے کرکٹ گراؤنڈز کو نجی کمپنیوں کو دینے سے روک دیا ہے۔

اے آر وائی نیوز کے مطابق اسلام آباد ہائیکورٹ نے وفاقی دارالحکومت کے کرکٹ گراؤنڈز کی نیلامی کے خلاف سابق چیئرمین ایم سی آئی سردار مہتاب کے حکم امتناع کی درخواست کو منظور کرتے ہوئے میٹرو پولیٹن کارپوریشن کو کرکٹ گراؤنڈ کرائے پر دینے سے روک دیا ہے۔

عدالت میں قاضی عادل ایڈووکیٹ نے دلائل دیتے ہوئے کہا کہ میٹرو پولیٹن کارپویشن نے کرکٹ گراؤنڈز میں مفت کرکٹ ختم کرنے کا منصوبہ بنایا تھا، گراؤنڈز آؤٹ سورس کرنے سے شہریوں کو پیسے دے کر کرکٹ کھیلنے کی اجازت ملتی، ایڈمنسٹریٹر ایم سی آئی کے پاس گراؤنڈز آؤٹ سورس کرنے کا اختیار نہیں ہے۔

درخواست گزار کے وکیل کے دلائل کے بعد اسلام آباد ہائیکورٹ کے جسٹس سردار اعجاز اسحاق نے میٹرو پولیٹن کارپوریشن کے فیصلے پر اسٹےآرڈر جاری کردیا۔

واضح رہے کہ اسلام آباد کی ضلعی انتظامیہ نے وفاقی دار الحکومت کے کرکٹ گراؤنڈز نجی شعبے کو دینے کا فیصلہ کرتے ہوئے چند روز قبل اس حوالے سے ٹینڈرز جاری کردیے تھے۔

انتظامیہ کا کہنا ہے کہ گراؤنڈ فیس کا تعین انتظامیہ کا اختیار ہے، فیس کے بغیر اب اسلام آباد میں کرکٹ گراؤنڈ دستیاب نہیں ہوگا، دوسری جانب مقامی کرکٹرز کا کہنا ہے کہ وہ مشکل سے کرکٹ کٹ خریدتے ہیں، گراؤنڈ میں داخل ہونے کے بھی پیسے لیے جائیں گے تو کرکٹ کیسے جاری رکھیں گے۔

یاد رہے کہ اسلام آباد کے ان گراؤنڈز نے قومی ٹیم کو بابر اعظم ، حارث رؤف، شان مسعود، عماد وسیم، عابد علی، محمد نواز، شاداب خان اور حسن علی جیسے بہترین کرکٹرز دیے ہیں لیکن میٹرو پولیٹن کے ان گراؤنڈز کو کرائے پر دیے جانے سے نوجوان یہاں مفت کرکٹ کھیلنے کی سہولت سے محروم ہوجائیں گے اور ان پر مستقبل میں کرکٹ کے دروازے بند ہوسکتے ہیں۔

Comments

یہ بھی پڑھیں