The news is by your side.

Advertisement

وہ کورونا علامت جو مریضوں میں وائرس کی شدت بتا سکتی ہے

عالمی ادارہ صحت اور دیگر ماہرین نے کوروناوائرس کی مختلف علامات ظاہر کی ہیں لیکن ان میں ایک ایسی علامت بھی ہے جو مریضوں میں وائرس کی شدت کی پیش گوئی کرسکتی ہے۔

طب کی دنیا میں ہونے والی نئی تحقیق میں انکشاف کیا گیا ہے کہ سونگھنے کی حس سے محرومی سے کورونا کی شدت کا ممکنہ طور پر اندازہ لگایا جاسکتا ہے اور صحت یابی سے متعلق بھی مشاہدہ ممکن ہے، سونگھنے کی حس میں اچانک کمی آنا یا مکمل ختم ہوجانا کوویڈ 19 کی علامات کا ہی حصہ ہے۔

ماہرین نے اس تحقیق میں یورپ کے اٹھارہ اسپتالوں سے ڈھائی ہزار سے زائد کورونا مریضوں کو شامل کیا، مشاہدے سے پتا چلا کہ ان میں سے 85.9 مریض سونگھنے کی حس سے محروم تو تھے لیکن ان میں بیماری کی شدت معمولی تھی جبکہ 4.5 فیصد میں معتدل اور 6.9 فیصد میں وائرس کی سنگین شدت پائی گئی۔

تحقیق کے مطابق مذکورہ مریضوں میں اس محرومی کا دورایہ 22 دن تک رہا جبکہ ایک چوتھائی مریضوں کو کورونا سے صحت یابی کے بعد بھی 60 دن تک یہ شکایت رہی۔

سائنس دانوں کا کورونا کے خلاف نیا اور مؤثر علاج دریافت کرنے کا دعویٰ

نتائج کو مدنظر رکھتے ہوئے ماہرین نے بتایا کہ معتدل سے سنگین شدت کے مقابلے میں معمولی شدت رکھنے والے مریضوں میں سونگھنے کی حس سے محرومی جیسی علامت زیادہ ظاہر ہوتی ہے، اور مریض کو اس شکایت سے نکل کر معمول پر آنے تک ممکنہ طور پر 6 ماہ بھی لگ سکتے ہیں۔

تحقیق میں شامل مریضوں میں 54.7 فیصد معمولی کیسز جبکہ 36.6 فیصد متعدل سے سنگین کیسز میں حس سے محرومی جیسی علامت سامنے آئی، ان دونوں گروپس میں 60 سے 6 مہینے کے دوران اس کا بدستور سامنا کرنے والوں کی شرح بالترتیب 15.3 فیصد اور 4.7 فیصد رہی۔

Comments

یہ بھی پڑھیں