The news is by your side.

Advertisement

فرانس میں غیرمسلح افراد نے تاریخی محل سے 20 لاکھ یورو لوٹ لیے

پیرس : فرانس میں ایک تاریخی محل میں نامعلوم غیرمسلح افراد نے گھس کر مالکان کے ہاتھ پاﺅں باندھنے کے بعد وہاں سے قیمتی پتھر اور کم سے کم دو ملین یورو کی رقم چوری کرلی۔

غیرملکی خبررساں ادارے کے مطابق مقامی استغاثہ نے بتایا کہ پیرس کے شمال مشرق میں سترہویں صدی کی حویلی کے مالکان کو چوروں نے یرغمال بنا کر تقریبا 20 لاکھ یورو (2.2 ملین ڈالر)لوٹ لیے۔

مولن خطے کے پراسیکیوٹر جنرل کے مطابق یہ واقعہ سترہویں صدی میں تعمیر ہونے والے وو لی ویسکاونٹ کے محل میں فجر سے پہلے پیش آیا،پولیس ذرائع کے مطابق بہ ظاہر چور مسلح نہیں تھے۔

پولیس کا کہنا تھا کہ چھ نقاب پوش افراد نے محل کے مالکان 90 سالہ کاؤنٹ پیٹریس ڈی ووگ اور 78 سالہ کاؤنٹیس کرسٹینا کے ہاتھ اور پاﺅں رسیوں سے باندھا لیکن انہیں مزید کوئی نقصان نہیں پہنچایا۔

ذرائع نے بتایا کہ چوروں نے محل کا خزانہ کھولا اور خاص طور پر قیمتی پتھروں کو جن میں زمرد کے ٹکڑے بھی شامل تھے چرا لیے۔

استغاثہ نے ورسیلس کے جوڈیشل پولیس کو تحقیقات کا حکم دیا ہے۔واکس ویکونٹے کے محل کو سالانہ 250،000 زائرین وزٹ کرتےہیں یہ محل فرانس میں 500 ہیکٹر اراضی کے ساتھ سب سے بڑی تاریخی نجی ملکیت ہے۔

پیرس سے تقریبا 60 کلومیٹر جنوب مشرق میں واقع یہ کوٹھی 1656ءسے 1661ءکے درمیان تعمیر کردہ فن تعمیر کا ایک شاہکارہے، محل کے مالک نیکولس فوکیٹ سے شاہ لیوس14کو حسد ہوگیا جس نے فوکیٹ کو عمرقید کی سزا دے کر اس کے محل پرقبضہ کرلیا تھا۔

کہا جاتا ہے کہ شاہ نے محل میں اس کے اعزاز میں شاہانہ ضیافت کے بعد فوکیٹ کو گرفتار کرنے کا حکم دیا۔نیکولس فوکیٹ کی گرفتاری کے بعد بادشاہ نے اس محل پر قبضہ کرلیا اور اس میں موجود خوبصورت اور قیمتی پتھر وہاں سے اٹھا لیے تھے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں