The news is by your side.

Advertisement

کمسن بچے کی منہ کے حساب سے 4 گنا بڑی زبان، ڈاکٹروں نے سرپکڑ لیا

واشنگٹن: امریکا میں بچے کی پیدائش کے بعد طبی ماہرین کمسن کی زبان دیکھ کر حیران رہ گئے۔

غیرملکی خبررساں ادارے کی رپورٹ کے مطابق امریکی ریاست پنسلوانیا میں تھومس نامی بچے کی پیدائش سال 2018 میں ہوئی، دو ہفتے بعد کمسن کی زبان منہ کے حساب سے 4 گنا بڑی دیکھی گئی۔

رپورٹ کے مطابق بچے کی سنگین حالت کو مدنظر رکھتے ہوئے ڈاکٹروں نے دو انچ زبان سرجری کے ذریعے کاٹنے کا فیصلہ کیا۔ پیدائش کے دو ہفتوں کے بعد ہی بچے کی سرجری ہوئی، تاہم آپریشن کے بعد بھی کمسن کی زبان غیرمعمولی طور پر بڑھ رہی ہے جس پر ماہرین کو شدید تشویش ہے۔

Three-year-old Owen Thomas, who suffers from a rare disease called Beckwith-Wiedemann Syndrome (BWS), was born with a tongue that was four times too big for his mouth

تھومس کی زبان بڑی ہونے کے باعث اسے سانس لینے میں مشکلات پیش آتی تھی، سرجری میں دو انچ زبان کاٹ تو دی لیکن اب بھی ڈاکٹروں کو خدشہ ہے وقت گزرنے کے ساتھ زبان دوبارہ بڑھ سکتی ہے۔

Plastic surgeons performed a lengthy surgery to remove two inches of Owen's tongue and make it easier for him to breathe

طبی ماہرین کا کہنا ہے یہ ایک نایاب بیماری ہے جسے ‘بیک وتھ وائڈمن’ کہتے ہیں، اس مرض کے باعث نوزائیدہ بچے کے جسم کا کوئی بھی اعضا حجم کے لحاظ سے غیرمعمولی طور پر بڑا ہوسکتا ہے۔

Owen's condition and treatment have difficult for his parents to cope with - and Theresa says it has caused issues in their marriage because they are both dealing with it in different ways

ڈاکٹروں کے مطابق یہ بیماری ہر 15 ہزار بچوں میں سے کسی ایک کو ہوتی ہے۔ تھومس کے کیس میں اس بیماری کی علامت زبان پر نمودار ہوئی جس کے باعث اسے کھانے پینے، سانس لینے سمیت دیگر پیچیدہ مسائل کا سامنا تھا۔ تاہم ماہرین اب تک زبان کی بڑھوتی روکنے کا علاج دریافت نہیں کرسکے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں