The news is by your side.

صدر ٹرمپ کے سابق وکیل نے کانگریس سے غلط بیانی کا جرم تسلیم کر لیا

مین ہٹن: امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے سابق نجی وکیل مائیکل کوہن نے عدالت کے سامنے کانگریس سے غلط بیانی کا جرم تسلیم کر لیا۔

تفصیلات کے مطابق امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے سابق وکیل مائیکل کوہن نے تسلیم کر لیا ہے کہ انھوں نے 2016 کے امریکی صدارتی انتخابات میں روسی کردار کے حوالے سے کانگریس کو غلط معلومات فراہم کی تھیں۔

میرا سابقہ وکیل ایک کمزور ارادے والا شخص ہے اور وہ ذہین بھی نہیں۔

ڈونلڈ ٹرمپ امریکی صدر

مائیکل کوہن پر اس حوالے سے مقدمہ مین ہیٹن کی ایک وفاقی عدالت میں زیرِ سماعت ہے، کوہن نے عدالت کو بتایا کہ انھوں نے ٹرمپ آرگنائزیشن کی ماسکو میں جائیدادوں سے متعلق جھوٹا تحریری بیان دیا تھا۔

کوہن کو اس سے قبل اگست میں بینک فراڈ، مالیاتی بے ضابطگیوں اور ٹیکس چھپانے جیسے جرائم کا مجرم بھی قرار دیا گیا تھا۔

امریکی صدر ٹرمپ کا کہنا تھا کہ ان کا سابقہ وکیل ایک کمزور ارادے والا شخص ہے اور وہ ذہین بھی نہیں، وہ محض اپنی سزا کم کرنے کے لیے جھوٹ بول رہا تھا۔


یہ بھی پڑھیں:  روس یوکرائن کشیدگی، ٹرمپ اور پیوٹن کی ملاقات یکم دسمبر کو ہوگی


ڈونلڈ ٹرمپ کا ماسکو رئیل اسٹیٹ پروجیکٹ سے متعلق کہنا تھا کہ اس پروجیکٹ کے بارے میں سبھی کو معلوم ہے کہ یہ عمل میں نہیں آ سکا تھا، اور صدر ہونے کا یہ مطلب نہیں کہ مجھے اب کاروبار کی اجازت نہیں۔

واضح رہے کہ آج ماسکو حکومت نے تصدیق کی ہے کہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی اپنے روسی ہم منصب ولادی میر پیوٹن کے ساتھ ملاقات یکم دسمبر کو جی 20 سربراہ اجلاس کے دوران بیونس آئرس میں طے ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں