The news is by your side.

Advertisement

ٹرمپ کم ملاقات، جنوبی کوریا نے مایوسی کا اظہارکردیا

سیؤل: امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ اور شمالی کوریا کے سربراہ کم جونگ ان کی ملاقات سے متعلق جنوبی کوریا نے مایوسی کا اظہار کردیا۔

تفصیلات کے مطابق ڈونلڈ ٹرمپ اور کم جونگ ان کی آٹھ ماہ بعد ملاقات ہوئی اور دونوں ملکوں کے سربراہان نے مذاکرات بغیر کسی معاہدے کے ختم کردیے ہیں۔

غیر ملکی خبر رساں ادارے کا کہنا ہے کہ شمالی کوریا اور امریکا کے سربراہان کے درمیان بغیر کسی معاہدے کے مذاکرات ختم ہوجانے پر جنوبی کوریا نے مایوسی کا اظہار کیا ہے۔

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ ویت نام کے دارالحکومت ہنوئی میں کم جونگ ان سے ملاقات کے بعد واشنگٹن دوبارہ روانہ ہوگئے۔

جنوبی کویائی حکام کی جانب سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ یہ بات افسوس ناک ہے کہ صدر ٹرمپ اور شمالی کوریائی رہنما کِم جونگ اُن کے درمیان ملاقات کسی مکمل معاہدے تک نہیں پہنچی۔ البتہ جنوبی کوریا کو دونوں ممالک کے درمیان پیش رفت کی امید ہے۔

قبل ازیں صدر ٹرمپ کا کہنا تھا کہ جوہری پروگرام کے خاتمے کے معاملے پرجلد بازی سے کام نہیں لینا چاہتے، معاہدے میں سرعت دکھانے کے بجائے زیادہ ضروری امر یہ ہے کہ معاہدہ درست انداز میں کیا جائے۔

جوہری تنازعہ، صدر ٹرمپ اور کم جونگ کی ملاقات بغیر معاہدے کے ختم

اس موقع پر شمالی کوریا کے سربراہ نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ اگر جوہری ہتھیاروں میں تخفیف نہ کرنی ہوتی تو امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ سے ملاقات نہ کرتا۔

 آٹھ ماہ قبل ٹرمپ اور اُن کی سنگاپور میں ہونے والی ملاقات میں جزیرہ نما کوریا کو جوہری ہتھیاروں سے پاک کرنے پر اتفاق رائے ہوا تھا۔ تاہم  بعد میں دونوں ممالک کے درمیان تحفظات دیکھے گئے تھے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں