The news is by your side.

Advertisement

کراچی میں بلدیاتی نظام کی مدت کے ساتھ وسیم اختر کی میئر شپ بھی ختم

کراچی: شہر قائد میں بلدیاتی نظام کی مدت ختم ہوگئی، میئر کراچی وسیم اختر کی میئر شپ بھی آج 4 سال بعد ختم ہوگئی۔

اے آر وائی نیوز کی رپورٹ کے مطابق کراچی میں بلدیاتی نظام کی مدت ختم ہونے کے باوجود ایڈمنسٹریٹر کراچی کی تعیناتی کا فیصلہ نہیں کیا جاسکا، 1460 دن چلنے والی بلدیاتی حخومت شہریوں کو بنیاددی سہولیات فراہم نہ کرسکی۔

وسیم اختر نے 31 اگست 2016 کو بطور میئر کراچی عہدے کا حلف اٹھایا تھا، وسیم اختر نے اپنی اسیری میں سینٹرل جیل سے آکر میئر شپ کا حلف لیا تھا۔

میئر کراچی نے اپنے نظامت کے دور میں کے ایم سی کے تین بجٹ پیش کیے، میئر نے سال 2017-18 کا 27 ارب روپے کا بجٹ پیش کیا۔

مزید پڑھیں: کراچی کا ایڈمنسٹریٹر کون؟ نام سامنے آگیا

وسیم اختر نے سال 2018-19 میں کے ایم سی کا 26 ارب روپے کا بٹ پیش کیا گیا۔

واضح رہے کہ میئر شپ جانے سے چند روز قبل وسیم اختر پریس کانفرنس کے دوران جذباتی ہوگئے تھے اور انہوں نے وفاق اور سندھ حکومت کو لکھے گئے خط پھینک دئیے تھے۔

یاد رہے کہ چند روز قبل معروف بیوروکریٹ یونس ڈھاگا کو ایڈمنسٹریٹر کراچی لگائے جانے کا امکان کی خبریں آئی تھیں۔

ذرائع کا کہنا تھا کہ یونس ڈھاگا گریڈ بائیس کے افسر رہے ہیں، یونس ڈھاگا کئی اہم وفاقی و صوبائی سرکاری عہدوں پر ذمے داری انجام دے چکے ہیں۔

Comments

یہ بھی پڑھیں