The news is by your side.

Advertisement

واٹس ایپ کے بارے میں ماہرین کا ایک اور خوفناک انکشاف

سان فرانسسکو: پیغام رسانی کے لیے استعمال ہونے والی موبائل ایپلیکیشن واٹس ایپ کے بارے میں ایک اور ایسا خوفناک انکشاف ہوا، جسے سُن کر صارفین کے ہوش اڑ سکتے ہیں۔

ان دنوں ویسے بھی واٹس ایپ کو پرائیویسی پالیسی کے حوالے سے صارفین کی شدید تنقید کا سامنا ہے مگر اب سائبر سیکیورٹی پر نظر رکھنے والے ماہرین نے ڈیٹا غیر محفوظ ہونے کے حوالے سے ایک اور انکشاف کردیا۔

سائبر سیکیورٹی پر نظر رکھنے والے ماہرین نے انکشاف کیا کہ واٹس ایپ پر بنائے جانے والے گروپ گوگل سرچ میں نظر آتے ہیں، صرف یہی نہیں بلکہ اُس میں موجود صارفین کی تصاویر بھی نظر آتی ہیں۔

ماہرین نے خدشہ ظاہر کیا کہ فیس بک کی زیرملکیت کمپنی صارفین کے ڈیٹا کو پہلے ہی شیئر کرچکی ہے ، یہی وجہ ہے کہ اُن کی تفصیلات سرچ انجن پر بھی نظر آرہی ہیں۔

مزید پڑھیں: واٹس ایپ کو کس طرح اَن انسٹال کیا جاسکتا ہے؟

یہ بھی پڑھیں: پرائیویسی پالیسی: کیا صارفین کا ڈیٹا غیر محفوظ ہوجائے گا؟ واٹس ایپ سربراہ کی اہم وضاحت

گیجٹ 360 کی رپورٹ کے مطابق کوئی بھی صارف واٹس ایپ گروپ کی تفصیلات گوگل کے سرچ انجن سے حاصل کرسکتا ہے۔ خاص طور پر اُن گروپس کی تفصیلات گوگل پر ظاہر ہوتی ہیں جو پرائیوٹ نہیں یعنی صارف اُن میں لنک سے ذریعے شامل ہوسکتے ہیں۔

سائبر سیکیورٹی کے ماہرین نے بتایا کہ یہ نقص 2019 میں بھی سامنے آیا تھا جس کی نشاندہی کے بعد واٹس ایپ نے اسے ختم کردیا تھا مگر اب پھر سے یہی سلسلہ شروع ہوگیا ہے۔

ماہرین کے مطابق کوئی بھی ہیکر ان گروپس میں ہونے والی چیٹ کو ٹیکسٹ فائل میں تبدیل کر کے اس کا فائدہ اٹھا سکتا ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں