22.3 C
Ashburn
اتوار, مئی 26, 2024
اشتہار

رفح پر اسرائیلی جارحیت پر عالمی برادری نے کیا کہا؟

اشتہار

حیرت انگیز

اسرائیل کے رفح کے انخلا کے حکم پر دنیا نے ردعمل کا اظہار کیا ہے۔

جنوبی غزہ کے شہر پر زمینی حملے کے بڑھتے ہوئے خدشات کے درمیان اسرائیلی فوج نے دسیوں ہزار فلسطینیوں کو رفح چھوڑنے کا حکم دیا ہے جہاں غزہ پر اسرائیل کی جنگ سے بے گھر ہونے والے 1.4 ملین افراد نے پناہ مانگی ہے۔

اسرائیلی فوج کے ایک ترجمان نے صحافیوں کو بتایا کہ مشرقی رفح میں تقریباً 100,000 لوگوں کو ساحل پر "ایک وسیع انسانی علاقے” میں منتقل ہونا چاہیے۔

- Advertisement -

سعودی عرب

سعودی عرب نے رفح پر اسرائیل کے حملے کے خلاف خبردار کیا ہے۔ سعودی وزارت خارجہ نے جنوبی غزہ شہر پر حملے کے "خطرات” سے خبردار کرتے ہوئے اسے غزہ کی پٹی کے تمام علاقوں پر حملہ کرنے اور وہاں کے مکینوں کو بےگھر کرنے کی اسرائیل کی "خونی، منظم مہم” کا حصہ قرار دیا ہے۔

اسرائیل کی جانب سے شہر پر فوجی حملے کے خدشات بڑھنے کے بعد ہزاروں افراد مشرقی رفح سے نقل مکانی کر رہے ہیں۔

مصر

مصری وزارت خارجہ نے ایک بیان میں اسرائیل پر زور دیا ہے کہ وہ "تحمل کا مظاہرہ” کرے اور اس "انتہائی حساس وقت” میں مزید کشیدگی سے گریز کرے کیونکہ جنگ بندی اور قیدیوں کی رہائی کے لیے بات چیت جاری ہے۔

مصری بیان میں کہا گیا ہے کہ رفح پر اسرائیلی حملہ "انتہائی انسانی خطرات پیدا کرے گا جس سے اس علاقے میں دس لاکھ سے زیادہ فلسطینیوں کو خطرہ ہے”۔

اردن

اردن کے وزیر خارجہ ایمن صفادی نے کہا کہ فلسطینیوں کا ایک اور قتل عام ہو رہا ہے، قتل عام کو روکنے میں ناکامی بین الاقوامی برادری پر بدنما داغ ہوگا۔

یورپی یونین

یورپی یونین کے خارجہ پالیسی کے سربراہ جوزپ بوریل نے کہا کہ اسرائیل کی جانب سے رفح میں شہریوں کے انخلاء کے احکامات بدترین، مزید جنگ اور قحط کی نشاندہی کرتے ہیں، یہ ناقابل قبول ہے اسرائیل کو زمینی کارروائی سے دستبردار ہونا چاہیے۔

فرانس

اسرائیل میں فرانسیسی سفارت خانے نے ایک بیان جاری کیا جس میں کہا گیا ہے کہ صدر ایمانوئل میکرون نے اتوار کو نیتن یاہو سے فون پر بات کی۔ سفارتخانے نے کہا کہ میکرون نے رفح پر اسرائیلی حملے کے خلاف اپنی سخت مخالفت کا اعادہ کیا اور غزہ کی پٹی تک رسائی کے تمام راستوں کے ذریعے انسانی امداد کے بڑے پیمانے پر داخلے کو یقینی بنانے کی فوری ضرورت کا اعادہ کیا۔

فرانسیسی وزارت برائے یورپ اور خارجہ امور نے کہا کہ ملک یہ بھی یاد کرتا ہے کہ شہری آبادی کی جبری نقل مکانی بین الاقوامی قانون کے تحت ایک جنگی جرم ہے۔

امریکا

ایک بیان میں، وائٹ ہاؤس کی قومی سلامتی کونسل کے ترجمان نے کہا کہ امریکا [اسرائیلی فوج] کی کارروائیوں کے لیے بات نہیں کر سکتا، ہم نے اسرائیلی حکومت پر رفح کے ایک بڑے زمینی حملے کے بارے میں اپنے خیالات کو واضح کر دیا ہے۔

ترجمان امریکی محکمہ خارجہ میتھیو ملر نے کہا ہے کہ امریکا رفح میں اسرائیلی فوج کے زمینی حملےکی  حمایت نہیں کرے گا۔

پریس بریفنگ میں انہوں نے کہا کہ اسرائیل حماس کی جانب سے جنگ بندی کیلئے قبول تجویز کا جائزہ لے رہا ہے اور امریکا بھی جنگ بندی تجویز پر حماس کے ردعمل کا جائزہ لے رہا ہے۔

برطانیہ

برطانیہ کے شیڈو سیکرٹری خارجہ ڈیوڈ لیمی نے کہا کہ رفح پر اسرائیلی زمینی حملہ "تباہ کن” ہو گا۔ انہوں نے کہا کہ اسے آگے نہیں بڑھنا چاہیے، فوری جنگ بندی، اسیروں کی رہائی اور غزہ کے لیے بلا روک ٹوک امداد پہنچائی جائے

اقوام متحدہ کے ادارے

فلسطینی پناہ گزینوں کے لیے اقوام متحدہ کی ریلیف اینڈ ورکس ایجنسی (یو این آر ڈبلیو اے) نے کہا کہ رفح میں اسرائیلی جارحیت کا مطلب زیادہ شہری مصائب اور اموات ہوں گی اس کے نتائج 1.4 ملین لوگوں کے لیے تباہ کن ہوں گے۔ UNRWA انخلاء نہیں کر رہا ہے ایجنسی جب تک ممکن ہو سکے رفح میں اپنی موجودگی برقرار رکھے گی اور لوگوں کو جان بچانے والی امداد فراہم کرتی رہے گی۔

Comments

اہم ترین

مزید خبریں