The news is by your side.

Advertisement

نئے روسی جنگی طیارے نے امریکا کی نیندیں اڑا دیں

جدید ٹیکنالوجی کی مدد سے ایک ایسا جنگی طیارہ تیار کیا گیا ہے جو آگے بڑھتے ہوئے پیچھے سے فائر کھول کر اپنے دشمن کو نشانہ بنانے کی صلاحیت رکھتا ہے۔

غیر ملکی میڈیا کے مطابق یہ جنگی طیارہ روس کی جانب سے بنایا گیا ہے۔ جدید ترین جنگی طیارے کا نام  Tupolev Tu-160M  رکھا گیا ہے جو اپنے پچھلے حصے میں لگے میزائل سے دشمنوں کے طیاروں کو باآسانی تباہ کر سکتا ہے۔

اس سپر سونک بمبار طیارے میں پیچھے سے آنے والے دشمن طیارے کا پتا لگانے کی صلاحیت موجود ہے۔

نیا روسی ساختہ وائٹ سوان دنیا کی تاریخ کا پہلا طیارہ ہے جو اس صلاحیت سے لیس ہے۔ Tu-160M ریورس لانچ میزائل کے استعمال کے ذریعے دشمن کے طیاروں کا پتا لگانے اور اسے روکنے کے قابل ہے۔

روس کی جانب سے تیار کردہ نئے Tu-160M طیارے پر ایک ریئر ویو ریڈار اسٹیشن نصب کیا گیا ہے جو اس بمبار طیارے کو فضا سے اپنے دفاع کے لیے ریورس لانچ میزائل استعمال کرنے کے قبل بناتا ہے۔

گزشتہ سال روس کے نئے دفاعی نظام نے امریکا کو حیران کر دیا تھا۔ روسی صدر نے مسلح افواج کو جدید ترین فضائی دفاعی نظام ”ایس 500“ میزائل سسٹم سے آراستہ کرنے کا اعلان کیا تھا۔

روسی صدر کا کہنا تھا کہ روس نے جدید ٹیکنالوجی سے لیس ہتھیار تیار کیے ہیں جو دفاع کو مزید مستحکم کریں گے، بہت جلد فوج کی دفاعی صلاحیتوں میں اضافے کے لیے ایس 500 اور سرمت سپرسونک میزائل دے گا۔

میڈیا رپورٹس میں کہا گیا تھا کہ روسی صدر کے حالیہ بیان نے امریکا سمیت تمام مغربی ممالک کی پریشانیوں میں مزید اضافہ کردیا ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں