The news is by your side.

Advertisement

شیرخوار بچے کا ہوا دنیا کا مہنگا ترین علاج

لندن: برطانیہ میں پانچ ماہ کے بچے کا جین تھیراپی کے ذریعے اسپائنل مسکولر اٹروفی (ریڑھ کی ہڈی کے پٹھوں کا) کا کامیاب علاج کردیا گیا ہے۔

برطانوی ادارہ صحت کے مطابق جنوب مشرقی لندن سے تعلق رکھنے والے بچے آرتھر کو بازوؤں اور پیروں کو حرکت دینے میں مشکل تھی اور وہ خود سے سر بھی نہیں اٹھا سکتا تھا۔

اسپائنل مسکولر اٹروفی کی وجوہات

ماہرین صحت کے مطابق ایک خراب جین کی وجہ سے یہ مرض بچے پر اثر انداز ہوتا ہے جس سے جسمانی اعضا، پٹھے کمزور ہوجاتے ہیں اور بچہ سانس لینے اور کھانے تک کا محتاج ہوجاتا ہے۔

ایس ایم کی بیماری میں متاثرہ جین ریڑھ کی ہڈی پر حملہ آور ہوتا ہے اور 90 فیصد مریض بچے دو سال کے اندر ہی فوت ہوجاتے ہیں۔

اسپائنل مسکولر اٹروفی کا علاج کیسے ممکن ؟

این ایچ ایس کی جانب سے ایک خفیہ رعایت پر بات چیت کی جا رہی ہے، جس کا مطلب ہے کہ مہنگی ترین دوائی زولجینسما سے ہر سال درجنوں بچوں کا علاج کیا جاسکے گا۔

آرتھر کے والد کا کہنا تھا کہ اگر ان کے بیٹے کا علاج نہ کیا جاتا تو وہ زیادہ عرصے ہمارے ساتھ نہ رہ پاتا۔

واضح رہے کہ زولجینسما دوا جین تھراپی پرجو موروثی مرض اسپائنل مسکیولر ایٹروفی کا علاج ہے، اور اسے دنیا کی قیمتی ترین اشیا میں شمار کیا جاتا ہے۔ زولجینسما کو نووارٹس کمپنی نے بنایا ہے جو ایک خاص مرض’اسپائنل مسکیولر ایٹروفی‘ یا ایس ایم اے کا علاج ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں