The news is by your side.

Advertisement

دنیا کی سب سے عمر رسیدہ وہیل ’لاپتہ‘ ہوگئی

واشنگٹن: دنیا کی معلوم عمر رسیدہ ترین اور بہت معروف جنگلی وہیل گرینی ’لاپتہ‘ ہوگئی جس کے بعد ماہرین نے اسے مردہ قرار دے دیا۔

گرینی نامی اس وہیل کی عمر 95 سے 105 سال کے درمیان تھی تاہم اس کی یہ عمر بھی غیر مستند قرار دی جاتی ہے۔ امریکا کے سینٹر فار وہیل ریسرچ کا کہنا ہے کہ کافی عرصے سے اس وہیل کو سمندر کی سطح سے باہر نہیں دیکھا گیا جس کے بعد رواں ماہ بالآخر انہوں نے اسے مردہ قرار دے دیا۔

wahle-3

سائنسدان اس وہیل کی شناخت اس کے فن (وہیل کی پشت پر بنے حصہ) میں موجود دانت نما ہڈی اور دیگر نشانات کی مدد سے کرتے تھے۔

کئی دہائیوں قبل جب دنیا بھر کے سمندروں میں وہیلوں کی تعداد کا ریکارڈ رکھنے کے لیے ان کی نمبر شماری کی گئی تھی تو اس کا آغاز گرینی اور اس کے خاندان سے کیا گیا تھا۔

مزید پڑھیں: جہازوں کا شور وہیل مچھلی کی صحت پر منفی اثرات کا باعث

گرینی کو جے 2 نمبر دیا گیا جبکہ اس کے بچے رفلز کو جے 1 نمبر دیا گیا۔ رفلز وہیل بھی سنہ 2010 میں 59 سال کی عمر میں مرگئی تھی۔

گرینی کے اور بھی کئی بچے تھے جنہیں مختلف نمبر دیے گئے۔

سینٹر فار وہیل ریسرچ کا کہنا ہے کہ گرینی کی طبعی عمر پوی ہوچکی تھی۔ وہ جانتے تھے کہ یہ دن آئے گا، یہ وہیل بالآخر موت کا شکار ہوجائے گی۔ وہ بوجھل دل کے ساتھ اسے الوداع کہہ رہے ہیں۔

whale-2

ماہرین کا کہنا ہے کہ یہ وہیل ٹائی ٹینک جہاز سے بھی زیادہ پرانی تھی۔

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں