site
stats
عالمی خبریں

مظلوم فلسطینیوں کے حوصلے چٹانوں کی طرح مضبوط ہیں

مظلوم فلسطینیوں کے پاس اسرائیل کو منہ توڑ جواب دینے کے لئے جدید ہھتیار تو نہیں لیکن ان کے حوصلے چٹانوں کی طرح مضبوط ہیں۔ اسرائیل فلسطینیوں پر ایسے خطرناک ہتھیار استعمال کررہا ہے جن پر عالمی پابندی عائد ہے۔اسرائیل غزہ پر حملے میں ایسے ہتھیار کا استعمال کر رہا ہے، جن پر عالمی سطح پر پابندی عائد ہے۔ یہ ہتھیار ایسی جدید ٹیکنالوجی سے لیس ہیں جن سے جانی اور مالی تباہی کا تصور کرنابھی مشکل ہے۔اسرائیل نے اپنے عام شہریوں کے بچاؤ کے لیے آہنی گنبد یا آئرن ڈوم بنایا ہوا ہے۔ جو دشمن کی جانب سے راکٹ حملوں کو روکنے کی صلاحیت رکھتا ہے.

ایک طرف جدید اسلحہ سے لیس آرمی ، دوسری جانب جذبہ ایمانی سے بلند حوصلے۔ اسرائیل کے جدید ہتھیاروں کے مقابلے میں حماس کے پاس صرف راکٹ ہیں۔جن کے حملوں میں ایک یہودی تک کی جان نہیں گئی،۔جب کہ اسرائیلی حملوں میں فلسطینی شہداءکی تعداد ایک سو ستر سےتجاوزکر گئی۔ فلسطینیوں کے حقوق کےلئےبرسرپیکار حماس کے پاس کوئی راکٹ ایسا نہیں ہے جسے ایک اہم ہتھیار کہاجاسکے۔

ان ہتھیاروں میں کم فاصلے تک مار کرنے والے راکٹوں میں بڑے گولے،گرنیڈراکٹ اور قسّام راکٹ شامل ہیں جو بالترتیب سترہ کلومیٹرسے اڑتالیس کلومیٹرتک مارکرسکتےہیں۔ان کےعلاوہ حماس کےپاس دور تک مارکرنےوالےفجر فائیو راکٹ ہیں جوزیادہ سےزیادہ پچھترکلومیٹر تک مارکرسکتےہیں جن سےتل ابیب اوریروشلم جیسےاسرائیل کے بڑے آبادی کےمراکز کو نشانہ بنایا جا سکتا ہے۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top