The news is by your side.

Advertisement

بابر بن عطا کے استعفے کا معاملہ، اندورنی کہانی سامنے آگئی

اسلام آباد: وزیراعظم کے سابق فوکل پرسن برائے انسداد پولیو مہم بابر بن عطا کے از خود استعفیٰ دینے کی اندرونی کہانی سامنے آگئی۔

نمائندہ اے آر وائی نیوز عبدالقادر کے مطابق بابر بن عطا کے استعفیٰ کی اندورنی کہانی سامنے آئی جس کے مطابق انسداد پولیو مہم میں ہونے والی بے صابطگیوں پر وزیر اعظم نے فوکل پرسن کے خلاف قدم اٹھایا۔

اطلاع کے مطابق بابر بن عطا نے عہدے کا غلط استعمال کیا اور وہ بڑی بے ضابطگیوں میں ملوث رہے، فوکل پرسن کے خلاف تیار کی جانے والی خفیہ رپورٹس وزیراعظم ہاؤس کو موصول ہوئی تھیں۔

چیف سیکریٹری کے پی سمیت دیگر رپورٹس سامنے آنے کے بعد بابر بن عطا کو وزیر اعظم ہاؤس طلب کیا گیا اور  انہیں 12گھنٹوں میں عہدہ چھوڑنے کی ہدایت گئی جبکہ یہ بھی واضح کیا گیا کہ نہ چھوڑنے پر انہیں برطرف کردیا جائے گا۔

رپورٹ میں بتایا گیا کہ بابر بن عطا نے وزیراعظم آفس، حکومتی عہدے کا ناجائز استعمال کیا اور پولیو مہم کو مصنوعی طور پر طوالت بھی دی جبکہ انہوں نے پولیو کیسز سے متعلق غلط اور بے بنیاد رپورٹیں جاری کیں۔

مزید پڑھیں: معاون خصوصی برائے انسداد پولیو بابر بن عطا مستعفی ہوگئے

یہ بات بھی سامنے آئی کہ ملک بھر میں ہونے والی پولیو مہم کے دوران 2 سے 25 لاکھ تک والدین نے اپنے بچوں کو قطرے پلوانے سے انکار کیا، اعداد و شمار کی رپورٹ میں سندھ، بلوچستان اور پنجاب کو نظر انداز کیا گیا۔

اسی طرح بابر بن عطا نے پولیو پروگرام کو  سیاسی رنگ دے کر فائدہ اٹھایا اور مرضی کےڈی ایچ اوز تعینات کیے، میڈیا اور سوشل میڈیا پر ذاتی تشہیر کی جبکہ میرٹ کے خلاف اور بلا اجازت سوشل میڈیا ٹیم تعینات کی جس میں دوستوں، رشتے داروں کو بھاری تنخواہوں پر بھرتی کیا گیا۔

انسداد پولیو پروگرام میں بے ضابطگیوں پر وزیراعظم کا بڑا اقدام

انسداد پولیو پروگرام میں بے ضابطگیوں پر وزیراعظم کا بڑا اقدام —- بابر بن عطا نے عہدے کا غلط استعمال کیا، بڑی بے ضابطگیوں میں ملوث — پولیو پروگرام کو سیاسی رنگ دے کر فائدہ اٹھایا، مرضی کے ڈی ایچ اوز کی تعیناتی — خفیہ رپورٹ وزیراعظم ہاوس کو موصول — بابر بنعطا نے استعفی دیا نہیں لیا گیا، اندرونی کہانی سامنے آگئی#ARYNews

Posted by ARY News on Saturday, 19 October 2019

رپورٹ کے مطابق سابق فوکل پرسن نے مشہور سوشل میڈیا ایکٹویسٹ کے بھائی کو بھی اپنی ٹیم کا حصہ بنایا، عالمی ڈونرز کے اداروں میں ذاتی فائدے کے لئے لابنگ کی اور پرنٹنگ آؤٹ لیٹس کے لیے دباؤ بھی ڈالا جبکہ پولیو مہم کی ناکامی کا ملبہ انہوں نے عالمی ڈونرز پر ڈالا۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں