The news is by your side.

Advertisement

بنگلہ دیش کی عدالت کا نکاح نامے سے’کنواری‘کا لفظ نکالنے کا حکم

ڈھاکہ : بنگلہ دیش کی عدالت عظمیٰ نے تاریخی فیصلہ سناتے ہوئے ملک میں مسلمانوں کے نکاح نامے سے ‘کنواری’ کا لفظ نکالنے کا حکم دے دیا، اس لفظ کے خلاف مہم چلانے والوں نے اسے ذلت آمیز اور امتیازی قرار دیا تھا۔

میڈیارپورٹس کے مطابق جنوبی ایشیائی ممالک میں مسلمانوں کی شادی سے متعلق قوانین کے مطابق دلہن کو سرٹیفکیٹ میں تین میں سے ایک کا انتخاب کرنا ہوتا ہے کہ آیا وہ کنوارہ ہے، بیوہ یا طلاق یافتہ ہے۔

ڈپٹی اٹارنی جنرل امیت تالوکر کے مطابق اپنے مختصر فیصلے میں عدالت نے حکومت کو حکم دیا کہ وہ شادی سرٹیفکیٹ سے یہ لفظ نکالے اور اس کی جگہ غیر شادی شدہ کا لفظ شامل کرے۔عدالت عظمیٰ کی جانب سے کیس کا تفصیلی فیصلہ اکتوبر میں جاری کیے جانے کا امکان ہے، جب تک نکاح نامے میں تبدیلی متوقع ہے۔

یہ کیس 2014 میں مختلف گروپوں کی جانب سے دائر کیا گیا تھا جن کی وکیل آئنَن نَہار صدیقہ نے کہا کہ یہ تاریخی فیصلہ ہے۔انسانی حقوق کے گروپ طویل عرصے سے شادی سرٹیفکیٹ میں شامل اس لفظ پر تنقید کر رہے تھے اور ان کا کہنا تھا کہ یہ ذلت آمیز اور امتیازی ہے۔ان کا کہنا تھا کہ یہ لفظ شادی کرنے والی خاتون کی رازداری میں رخنہ ڈالنے کے مترادف ہے۔

عدالتی فیصلے میں انتظامیہ کو یہ حکم بھی دیا گیا کہ وہ یہی 3 آپشنز ‘غیر شادی شدہ، رنڈوا یا طلاق یافتہ’ شادی کے سرٹیفکیٹ میں دولھے کے لیے بھی متعارف کروائے۔واضح رہے کہ بنگلہ دیش دنیا کا تیسرا بڑا مسلم اکثریتی آبادی والا ملک ہے جس کی 16 کروڑ 80 لاکھ آبادی کا لگ بھگ 90 فیصد حصہ مسلمانوں پر مشتمل ہے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں